بابائے انقلاب – Le père la révolte de Montéhus (1872-1952)

 

بابائے انقلاب

Le père la révolte

par

Gaston Mardochée Brunswick dit Montéhus (1872-1952)

 

 

 

Traduit du français en ourdou par

Shahzaman Haque

Plidam, Inalco.

 

۔مونتے اُوس

فرانسیسی گُلُوکار

۔ ترجمہ نگار

شاہ زماں حق

مجھے لوگ بلاتے ہیں بابائے انقلاب

مجھے لوگ بلاتے ہیں پاگل بُڈّھا

کیونکہ میں آپے سے ہو جاتا ہوں باہر وقتاً فوقتاً

میری جھنجھلاہٹ کا کوئی علاج نہیں

وہ کہتے ہیں کہ میں ہوں انقلابی

کہ میں ہوں انتشاری ، و اللہ عالم اور نا جانے کیا کیا

میں خبیث نہیں ہوں، بلکہ ہوں اس کا برعکس

میں مِن و عَن عیسٰی کی مانند جو مرا صلیب کے اوپر

پیارے فوجیو

آرزو کر اَمن کی نا کہ جنگ کی

یہ جان لو میرے بندو !

کہ جنگ ہے رنج و مصیبت

نگاڑے بجاؤ

تاکہ سرحدوں میں سمجھوتا برقرار رہے

یہ بھی یاد رکھو

کہ سرحد کے دونوں طرف منتظر ہیں تمہارے اہل و عیال

 

میں نے جنگ دیکھی ہے ہر بوڑھوں کی طرح

ابھی تک میں دہشت زدہ ہوں

میں نے دیکھا قتل ہوتی بوڑھی مائیں

اور سُنی وہ چیخ جو بیان نہیں کر سکتا

اِس لیے میں دیتا ہوں  پیغام

امن انسان محبت انسان

میرا دل باغ باغ ہوتا ہے

جب لوگ سُنتے ہیں میری باتوں کو

یہ وہ خوشیاں ہے جس کی میں تبلیغ کرتا ہوں

تُم نے نظر گڑائی میری قمیض کے کاج پر

کیونکہ اُس میں ٹکا ہے تمغہ جُرَّت

میں نے اِسے نہیں جیتا کسی جنگ میں

لیکن بطور محافظ

میں نے اپنی جان سینکڑوں دفعہ داؤں پر لگائی

دوسروں کے لیے موت کو مات دی

اپنی روح اور ضمیر کا واسطہ ہے  کہ

بجائے جان لینے کے میں نے دشمن کو بخشا

 

 

 

<a rel=”license” href=”http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/”><img alt=”Licence Creative Commons” style=”border-width:0″ src=”https://i.creativecommons.org/l/by-nc-sa/4.0/80×15.png” /></a><br />Ce(tte) œuvre est mise à disposition selon les termes de la <a rel=”license” href=”http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/”>Licence Creative Commons Attribution – Pas d’Utilisation Commerciale – Partage dans les Mêmes Conditions 4.0 International</a>.

 

 

 

 

 

 

 

 

La grève des mères – Montéhus

ماؤں کی ہڑتال

La grève des mères 

 

Montéhus (1872-1952)

Traduit par Shahzaman Haque

 

چونکہ آگ اور بندوقيں

گولياں اور توپيں

واديوں، ميدانوں ميں

بچھا ديتی ہيں، لاشوں کا جال

 

چونکہ بَشَرہے خون کا پياسا

اور منکر وہ بھائی چارے کا

!اُٹھو عورتوں! کام پر چَلو عورتوں

اب تمہیں بچانی ہے انسانیت

 

زمین کو آباد کرنے سے منع کرو

بچّوں کو پیدا کرنا بند کرو

ماؤں کی ہڑتال شروع کرو

ماؤں کی ہڑتال شروع کرو

 

جَلّادوں کو اپنی مَنشا ظاہر کرو

اپنے جسم و خون کا دفاع کرو

جنگ مُردہ باد، ظالم مُردہ باد

جنگ مُردہ باد، ظالم مُردہ باد

 

تم نے بيس سال پسينہ بہايا

اپنے بيٹے کو مرد بنانے ميں

جبکہ کسی بدبخت فوجی نے

اسے برباد کر ديا، کچھ لمحوں ميں

 

وہ بچّہ جو تُمہاری اُمید تھا

جِسے تُم نے اپنا دُودھ پیلایا

وہ تُجھے بوڑھا اور بے خوراک چھوڑ کر

خود بڑی سَخت موت مر گيا

 

کیا آسمان کی سرحدیں ہوتی ہیں؟

کیا وہ پوری دُنیا کو ڈھک نہیں لیتا ؟

پھر کیوں ہیں زمیں پر رکاوٹیں ؟

کیوں ان گنت کی سولی چڑھے؟

 

!قتل جیت کا نام نہیں

ملعون ہو موت کی فصل لگانے والا

نہیں چاہئیے تُمہاری سَر بُلندی کے لیے

اپنے عزیز بچوں کی قُربانی۔

 

 

 فرنچ میں یہ نظم یہاں پر سُنیں

Rechercher dans OpenEdition Search

Vous allez être redirigé vers OpenEdition Search