Mise en avant

انگریزی کی دھاک

Publié sur Pratalipi  

Publié sur Mukaalma.com

Le 02/06/2022

انگریزی کی دھاک

۔ ڈاکٹر شاہ زماں حق

انگریزی کوشایداگرایک لسانی وائرس کا نام دیا جائے تو غلط نہ ہوگا ۔  اِس وائرس کا شکار پندرہ سالہ لڑکا راکیش ہوا تھا جوکہ ریاست بہار کے دارالحکومت پٹنہ کے ایک نجی انگریزی میڈیم سکول میں نویں درجے کا طالب علم تھا ۔ ویسے تو راکیش ایک متوسط طبقے سے تعلق رکھتا تھا مگر باوجود اس کے، کوئی بھی گھر کا فرد انگریزی زبان نہیں بولتا تھا۔ انگریزی زبان سےبیگانگی کے باوجود انگریزی کا دخل گھر میں ٹی وی اشتہاروں اور مقابلے کے امتحانوں کے رسائل کے ذریعے ہو چُکا تھا ۔

راکیش کے والدین کی مادری زبان بھوج پوری تھی اور راکیش کو بھی بھوج پوری میں اچھی مہارت تھی ۔ بہار کے شُمال میں گوپال گنج نامی چھوٹے سے شہر سے راکیش کے والد طالب علمی کے زمانے یعنی  ستّر کی دہائی میں پٹنہ آئےاور  کچھ سالوں کی کڑی محنت کے بعد وہ بہار پولیس میں بھرتی ہو گئے ۔ اُن کی پوسٹ زندگی بھر ایک تھانے میں سب انسپکٹر کی رہی اور وہ زیادہ ترقّی نہیں کر سکے ۔ اُن کو یہی ملال رہا کہ اگر انگریزی آتی ہوتی تو محکمے میں بہتر ترقی ہوسکتی  تھی ۔ اُنہوں نے شادی اپنے گاؤں میں کی اور کچھ عرصے کے بعد اپنے دو چھوٹے بھائیوں کو بھی پٹنہ بلا لیا ۔ راکیش کے والد اپنے بھائیوں کو انگریزی پر زیادہ زور دینے کے لیے کہتے تھے ۔ اُن دونوں کا پیشہ تو کچھ خاص نہیں تھا لیکن انگریزی پر اچھی گر فت ہونے کی وجہ سے خاندان میں دونوں کی عزّت ہونے لگی ۔ دونوں کی شادی کے لیے بھی یہ نسخہ استعمال کیا گیا کہ لڑکے فر فر انگریزی بولتے ہیں ۔

اس فرنگی زبان سے لوگوں کو پٹنہ شہر میں یا بہار کےتمام حصّوں میں نہ جانے کیسی کیسی امیدیں بندھ جاتیں ۔ انگریزی بولنے والا کامیابی کی سیڑھی تیزی سے چڑھے گا ۔ ہمیشہ ایک رعب رہے گا ۔ سرکاری نوکری تو بچّوں کا کھیل ہے، نجی کمپنیاں ہاتھوں ہاتھ استقبال کریں گی ۔ انگریزی کوئی زبان نہ ہوئی بلکہ ایک شاہی پوشاک ہو گئی ۔ اِسی پوشاک کو پہننے کی اور اپنی اولادوں کو پہنانے کی ایک خواہش چلی ہوئی تھی ۔

راکیش کے والد یوں تو پٹنہ میں نوکری کے دوران ہی انگریزی کی اہمیت سمجھ گئے تھے لیکن پٹنہ آنے سے پہلے جب وہ اپنے گاؤں میں رہتے تھے تو اُنہیں ایک واقعہ یاد تھا ۔ اُن کے گاؤں میں دوگروہوں کے درمیان جھڑپ ہو گئی ۔ پولیس بھی پہنچی لیکن معاملہ سُلجھ نہیں رہا تھا ۔ اچانک ایک شخص نمودار ہوا۔ اُس نے انگریزی میں زور سے سبھی کو ڈانٹ پِلائی اور کہا ’کیپ یور ماؤتھ شَٹ‘

یہ سُنتے ہی سبھی کو سانپ سونگھ گیا ۔ یہ فقرہ کسی کو سمجھ میں تو آیا نہیں لیکن انگریزی کے رعب کا اثر فوری طور پر دکھائی دینے لگا ۔ وہاں پر کھڑے پولیس والوں نے اُس شخص کو زور دار سیلوٹ کیا اور اُنہیں ایسا لگا کہ وہ نوجوان اُن کا افسر ہو ۔

’وھاٹس دا میٹر ؟ ‘ (کیا ماجرا ہے ؟) – نوجوان شخص نے اپنی آواز میں مزید کڑک  پیدا کر تے ہو ئے کہا۔

’نو سَر، نہیں سَر، یَس سَر،  پِلیج سَر‘ ۔ ایک پولیس والے نے گھبراتے ہوئے ایک دو لفظ انگریزی میں بَڑبَڑانے کی کوشش کی ۔ اُس نے اپنے ماتحت کو کُرسی منگوانے کا اشارہ کیا ۔ کُرسی پر وہ شخص بیٹھا۔ سبھی اُس کی باتوں کو سُن رہے تھے، وہ بیٹھتے ہی بھوج پوری میں بات کرنے لگا تھا لیکن پھٹکار انگریزی میں لگاتا ۔

راکیش کے والد کو معلوم تھا کہ وہ شخص دس سال پہلے دہلی پڑھائی کرنے گیا تھا ۔ دہلی یونیورسٹی سے  فلسفہ میں ماسٹرز کرنے کے بعد وہ بیروزگار تھا۔ اپنا خرچا چلانے کے لیے دہلی کے اوکھلا گاؤں کے مُحلّے میں وہ انگریزی ٹیوشن پڑھاتا تھا۔ گھر میں اُس کے یہاں بدحالی تھی، پیسے وہ باقاعدگی سے بھیجتا نہیں تھا۔ لیکن آج اُس کا رعب دیکھ کر راکیش کے والد کو یقین ہو گیا کہ انگریزی سے معاشرے میں عزت ضرور مل سکتی ہے۔

راکیش کو انگریزی کی اہمیت کی گھُٹّی اُس کے والد نے جم کر پِلائی ۔ اُس کا داخلہ پٹنہ کے ایک نامور انگریزی میڈیم سکول کرائسٹ چرچ میں کروا  دیا گیا۔ وہاں ہندی ٹیچر کے علاوہ سارے اساتذہ صرف انگریزی میں طلبا سے گفتگو کرتے۔

راکیش کا قد لمبا، سانولا رنگ، موٹا چشمہ اور اُتنے ہی موٹے ہونٹ اُس کے منحنی سے جسم پر خوب نُمایاں ہوتے تھے۔ راکیش کو اپنے معمولی نقوش کا احساس تھا ۔ اپنی طرف ساتھیوں کو مائل کرنے کے لیے اس نے خود پر ہنس کر دوسروں کو ہنسانے کا کام شروع کر دیا۔ مزاجاً  راکیش بہت بڑا  گپّی تھا۔ اُس کا دل گپ سے کبھی نہ بھرتا ۔ گپ جیسے اُس کی زندگی کے  لیے  دوسری آکسیجن تھی ۔ وہ سکول تو  گپ  لگانے  کے لیے ہی  آتا تھا ۔

اس کے چند ہم جماعتوں میں اُس کی دوستی عرفان سے پکی ہو گئی جو اُسی کے محلّے میں دو فرلانگ کی دوری پر رہتا تھا۔ عرفان کو بھی انگریزی سے کافی لگاؤ تھا لیکن وہ راکیش کی طرح انگریزی کے نشے میں غرق نہ رہتا تھا ۔

راکیش کی کلاس میں یوں تو انگریزی پر مہارت حاصل کرنے والا ایک سے بڑھ کر ایک طُرّم خان تھے  لیکن ایک لڑکا جس کو وہ اپناگُرُو تسلیم کر چُکا تھا وہ تھا  راجیش ۔ بھاری بھرکم ضخیم بدن کا مالک، گول چہرہ، نیم سانولا رنگ، موٹے موٹے چشمے اور گھنگھریالے بال والا یہ چھ فُٹ کا ساتھی کلاس میں سب سے پیچھے والی سیٹ پر بیٹھتا تھا۔ راجیش کی اپنی ایک مُتوازی کلاس چلتی تھی جس کا موضوع شیکسپیئر کے بدنام کردار ہوا کرتے تھے۔ راجیش اُن کے بارے میں بہت پُراسرار اور دھیمی آواز میں انگریزی میں لکچر دیتا ۔ بظاہر اُس کا اپنا گروہ تھا اور اُس کے سُننے والے اُسی کے مدّاح تھے۔ درسگاہ کے کسی بھی استاد کی ہمّت نہ ہوتی کہ راجیش کو کلاس کے پیچھے بُدبُداتے دیکھ کر ڈانٹ پلائے۔ راجیش نے اپنے انگریزی کے رعب سے ان کو متاثر کر رکھا تھا۔ وہ انگریزی کے اُن الفاظ کا استعمال کرتا جس سے اُس کے اساتذہ بھی نابلد تھے ۔ راکیش، راجیش اور اساتذہ کے درمیان تکرار کو دیکھ کر خوب لطف اٹھاتا ۔ شروع شروع میں تو راکیش راجیش کے لہجے کی نقّالی کرتا لیکن انگریزی میں رفتہ رفتہ عبور حاصل کرنے کے بعد اُس نے انگریزی میں کلام کرنے کا اپنا الگ ہی انداز اختیار کر لیا۔ ہاتھوں کو اوپر کی طرف لہراتا، لمبی مُسکان کھینچتا اور اوپری جسم میں خمیدگی پیدا کرتا۔

راکیش نے غور کیا کہ سکول کے بعد یا چھُٹیوں کے دوران اُس کے انگریزی بولنے کا دائرہ تقریباً ختم ہو چکا تھا ۔ لے دے کر عرفان تھا یا مُحلّے میں ایک دو اور جماعت کے ساتھی جِن کے ساتھ وہ گفتگو کرتا ۔ لیکن اِس گفتگومیں طمانیت نہ تھی ۔  باتیں چندرسمی انگریزی جملوں یا چند انگریزی الفاظ  سے  آگے نہ بڑھ پاتیں ۔ یہ دیکھ کر اُسے ایک الگ صدمے کا احساس ہوا ۔ اب وہ انگریزی میں کہاں گفتگو کرے؟

نَوّے کی دہائی میں پٹنہ کے پوش علاقوں میں اچانک سپوکن انگریزی کوچنگ اور کمپیوٹر پروگرام کے کورسز کی بھرمار شروع ہوگئی ۔ راکیش نے ایک دو اشتہار کے بورڈ دیکھے تو اُس کے ذہن  میں یہ بات آئی کہ کیوں نہ ان جگہوں پر اپنی انگریزی آزمائی جائے۔ راکیش نے اُن اداروں میں جانا شروع کیا اور ریسپشن پر ہی ایسی انگریزی ٹھونکتا کہ سبھی سُننے والوں کو کچھ سمجھ میں نہ آتا۔ راکیش ایک ایک کا منہ تکتا کہ اُس نے فارسی تو نہیں بولی ہے۔

راکیش ایک سیدھا سا سوال جڑتا (وھاٹ اِز دا موڈیوُل آف یور کورس ؟) ۔ راکیش کے انگریزی فقرے   کوچنگ کے ڈائریکٹرں کے  پلےّ   نہ پڑتے ۔ وہ اپنا سر کھجاتے اور بہانہ بناتے ہوئے اپنے چیمبر سے باہر نکل جاتے۔ ریسپشن کی کم عمر خواتین داخل ہوتیں اور راکیش کے ہاتھوں کو پکڑ لیتیں اور کہتیں “کیسے ہیں سَر، کچھ چائے ٹھنڈا لیں گے کیا ؟”  ۔ راکیش نے جب اپنی آؤ بھگت دیکھی تو بغلیں بجانے لگتا۔

دھیرے دھیرے پورے شہر میں راکیش کی رعب دار انگریزی کا ڈنکا بجنے لگا ۔ کوچنگ والوں پر ہیبت طاری ہو گئی۔ راکیش کو دیکھتے ہی کوچنگ کا مالک اپنے خادموں کو بولتا “ارے شَٹَر گِرا شَٹَر” ۔ انہوں نے کوچنگ سنٹر کے پھاٹک پر ایک نئے ملازم کو رکھا جس کا محض یہ کام تھا کہ وہ راکیش کی آمد پر سبھی کو آگاہ کرے۔

راکیش پٹنہ کی سڑکوں پر لارڈ میکالے کے لسانی منصوبے کی ایک جیتی جاگتی تصویر تھا۔ راکیش کے خون اور گوشت میں ہندوستانی ثقافت کُوٹ کُوٹ کر بھری تھی لیکن انگریزی زبان سے وہ ایک انگلِش مین یا ملکہ وِکٹوریا کا تابع لگتا تھا۔ زبانِ انگلستان کےعشق کا خمار ایساچڑھا ہوا تھا کہ دیوانگی کے عالم میں انگریزی بولنے کے لیے بے چین رہتا ۔

راکیش جب ایک کوچنگ سنٹر سے نکلتا تو جارحانہ انداز میں دوسرے کا رُخ کرتا ۔

راکیش کو جس شام انگریزی بولنے کا موقع نہ ملتا تو وہ دُرشت آواز میں راہ چلتے لوگوں پر طنز کے تیر  پھینکتا۔ ایک بار تو اُس نے رات کی تاریکی کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے ایک کافی بھاری بھرکم شخص کو پیچھے سے کرخت آواز میں کہا : “ابے او جٹ دھاری، کدھر جا رہا ہے بے ؟ ” اتنا سُننا تھا کہ اُس شخص کی چال لڑکھڑا گئی ۔ راکیش گھوڑے کی مانند  ہِنہِنا کر ہنسا ۔   اپنے  سینے کو ٹھونک کر بولا کہ” یہ ہمَّت انگریجی کی دین ہے”۔

راکیش کے حجرے میں انگریزی کتابیں، انگریزی رسائل کا ایک پلندہ پڑا رہتا۔ شاید وہ کباڑ کی دکان سے ان رَدِّیوں کو اُٹھا کر لے آتا کیونکہ یہ انگریزی میں تھے۔ جب کوئی دوست اُس کے گھر آتا تو وہ بہت خوش ہو کر اُسے اپنے کمرے میں لے جاتا اور ایک ایک رسالہ کھول کھول کر اُس کو دکھاتا اور  تفصیل  سے بتاتا کہ فلاں آئی اے ایس کو انگریزی کی وجہ سے کس طرح کامیابی ملی۔

رفتہ رفتہ راکیش کے کوچنگ سنٹروں کے  دورے میں کمی آتی گئی  کیونکہ شہر میں  کوئی ایسا کوچنگ سنٹر نہیں بچا تھا جہاں راکیش نے اپنے انگریزی کے جوہر نہ دکھائے ہوں ۔

اب راکیش کی عمر پچاسویں  برس کی طرف گامزن ہے ۔ وہ تجرّد کی زندگی گزار رہا ہے۔ گھر میں بُوڑھی ماں متمنّی ہے کہ گھر میں  بہو آئے مگر راکیش نے انگریزی کو ہی  عروسی درجہ دے دیا ہے۔

ختم شُد

Mise en avant

La vache

La vache

 

Par Enver SAJJAD

Traduit de l’ourdou par Shahzaman Haque

 

Un jour, après s’être concertés, ils décidèrent que la vache pouvait être envoyée à l’abattoir.

« Elle ne vaut pas tripette », dit l’un d’eux

« Qui achètera ce sac d’os ? »

« Mais papa, je pense que si on la fait soigner correctement… »

« Tais-toi, ne fais pas le malin ».

Nikka se tut et s’éloigna. En se triturant la barbe à la recherche de la sagesse, son père s’assit avec les aînés.

A peine ai-je ouvert la bouche que ces gens-là se comportent comme des bouchers. Je connais cette boutonneuse depuis  le jour où j’ai connu ma mère, et depuis qu’ils pensent à l’emmener à l’abattoir, à chaque instant je me sens orphelin.  Je pense devenir un orphelin mais qu’y puis-je ? Ils se moquent de moi parce que j’en prends bien soin et me suis tellement attaché à ses os ? Pour quelle raison ?

« Au lieu de l’amener à l’abattoir, pourquoi ne l’envoyez-vous pas à l’hôpital ? », Nikka n’en pouvait plus.

Toi, tu ne comprends pas, elle ne peut pas se remettre. Cela ne sert à rien de gaspiller de l’argent pour la soigner ».

Ah, que je suis stupide ! Je viens de fêter hier mon quinzième anniversaire.

« Mais vous pouvez au moins essayer une fois ? Faites-la soigner ».

« Tais-toi quand les adultes parlent ».

J’ai envie de vous envoyer tous à l’abattoir.

Ils tenaient tous la vache par une chaîne. Mais il semble bien que la vache ait compris ce qui se passait. Elle n’a pas bougé d’un pouce et est restée sur sa position. Ils l’ont battue comme plâtre. Nikka essayait de comprendre la scène, le regard vide.

Bravo, ma boutonneuse, ma vache, ma petite maman vache, ne bouge pas. Tu ne sais pas comment ces gens vont te traiter. Ne bouge surtout pas, sinon …

La vache est restée immobile. Par moment, elle jetait un regard vers lui. Son veau, nonchalant, était attaché à un poteau un peu plus loin.  Il n’entendait pas les os craquer sous les coups de bâton. Les oreilles de Nikka aussi semblaient se boucher progressivement.

Exténués, les vieux se rassirent, en se rapprochant les uns des autres. Puis, ils décidèrent que, même s’ils réussissaient à faire bouger la vache, ils ne pouvaient exclure qu’elle s’effondre. Il valait donc mieux qu’ils la transportent en camion.

Le lendemain, un camion était là.

Au son du camion, la vache a tourné la tête et regardé. Elle a fait un clin d’œil et s’est penchée dans la mangeoire où Nikka avait mis des fourrages avant d’aller voir le camion.

« Vous voulez vraiment la… ? »

Il n’en croyait pas ses yeux.

« Non mais, tu penses qu’on plaisante ? », dit l’un d’eux.

« Papa, donne-moi cette vache, moi, je vais…. »

« Fils de toubib », dit un autre vieux.

« Papa, sans elle, je … »,

« Fils de Roméo », hua un troisième.

Puis un  quatrième, puis un cinquième. Tous ces vieux, ils sont tous pareils. Et parmi eux mon père, qui se comporte bizarrement en considérant sa barbe comme le réceptacle du savoir.

Mon petit, si on pouvait se débarrasser d’elle en donnant dix roupies au chauffeur, on y trouverait notre compte ».

Ô misérable maquignon,  tiens la voilà ta roupie, c’est moi qui te la donne… mais… j’ai le gousset vide, mais quand, quand je grandirai …

Rires

Quand, quand je vais commencer à gagner…

Rires

Mais d’ici là, les os de ma boutonneuse seront pulvérisés. Que puis-je faire ?

L’un des vieux se dirigea vers la mangeoire pour chercher la vache. Nikka l’a suivi avec curiosité (juste pour savoir ce qui se passe). Le vieux lui a enlevé la chaîne. En fouillant la mangeoire, la vache mit dans sa bouche quelques gros brins d’herbe et regarda Nikka. Puis, levant son sabot, elle décida de bouger.

« Non, non, non », cria Nikka.

« Boucle-la ».

La vache était debout.

« Hé, hé, hé », dit le vieux en tirant sur la chaine d’un coup sec.

« Non, la boutonneuse, non ».

« Tu vas te taire, ou je t’arrache la langue ? »

« Nikka tint sa langue. Le vieux tira brusquement de nouveau sur la chaîne ».

« Avance, la grosse ! Le chauffeur du camion n’est pas ton domestique et ne t’attendra pas toute la journée ».

Les yeux de la vache lui sortirent des orbites et sa langue s’agita dans sa bouche. Mais elle tint ferme sur ses sabots. Nikka sourit. Puis s’attrista aussitôt.

Elle était, elle était vendue et finalement elle allait devoir partir. Je reste convaincu que si on dépensait un peu d’argent pour la soigner… mais comment faire comprendre cela à des vieux ? Si j’étais médecin… et là, ce veau ? N’a-t-il aucune honte ? Sa mère est rouée de coups et il regarde les évènements comme un idiot.

Il n’avait plus de mots.

Après, l’un d’eux eut un éclair de génie. Il agrippa la queue de la vache et se mit à la tordre violemment à trois ou quatre reprises. La vache se mit à courir, la croupe endolorie. Le vieux regarda Nikka et rit aux éclats.

La douleur conduisit la vache tout droit au camion. Le cœur de Nikka battait fortement.

Sale type ! Honte à toi ! Que tu sois damné !

Le chauffeur du camion mit une planche en bois pour permettre à la vache de monter dans le camion. La vache posa un sabot sur la planche.

Ne monte pas

« Coupez-lui la langue – Il remonte la vache – Il lui fait peur »

Nikka se tut à nouveau et recula. La vache regarda d’abord la planche. Puis, elle regarda vers Nikka.

Sale type ! Honte à toi ! Que tu sois damné !

Que puis-je faire de plus ? Que puis-je faire de plus ?

Jusqu’à cet instant la vache n’avait pas eu peur. Elle mugit bruyamment, le regard méfiant.

Ma boutonneuse sait, elle sait bien qu’avec un pas sur la planche elle montera dans le camion. Mais elle ne sait pas pourquoi elle ne veut pas monter dans le camion.

Elle reçut de nouveaux coups de bâton sur le dos. Ses jambes tremblèrent mais elle ne bougea pas. Lorsqu’ils l’agressèrent une nouvelle fois, elle allait fuir de douleur mais, tout à coup, papa eut une idée de génie. Il lui donna un grand coup de bâton sur le visage. La vache tourna la tête vers la planche. Il dit d’une voix haletante, « Allez, les amis ».

Ils s’y sont tous mis et l’ont de nouveau rouée de coups.

Nikka se tenait loin, debout. Immobile, insensible.

« Cela ne va pas marcher de cette manière », dit l’un d’eux en reprenant son souffle.

« Alors, comment faire ? »

S’adossant au camion, ils étaient en train de réfléchir quand soudain, la vache s’est tournée et s’est mise à courir en soulevant un nuage de poussière, passant devant Nikka comme s’il était un étranger.

Nikka était affligé.

« Attention, attention à ta gauche », avertit l’un d’eux.

« C’est naturel », dit papa en se ratissant la barbe des doigts.

La vache était en train de lécher son veau. Les yeux de papa se mirent à briller malicieusement. « Ramène donc le veau ici. Si nous avions pensé à cette stratégie hier, on aurait pu économiser l’argent du camion ».

L’un des vieux saisit le veau par la corde. La langue de Nikka se mis à trembler. Plongée dans ses pensées, en caracolant avec un peu d’hésitation, la vache suivit le veau en levant les sabots. Elle passa à côté de Nikka qui laissa échapper quelques jurons.

Grimpant sur la planche, le veau fit quelques cabrioles dans le camion. La vache s’approcha de la planche et s’arrêta. Stupéfaite, elle regarda le veau puis se tourna lentement pour regarder Nikka. L’un des hommes prit vite une gerbe de fourrage et la déposa devant la vache. Celle-ci brouta quelques tiges et, après avoir réfléchi, les laissa tomber par terre. Elle mit un sabot sur la planche. Puis un deuxième.

Dieux sait mieux que quiconque ce qui est arrivé à Nikka. D’un coup, on aurait dit que son corps était envahi par un torrent de sang frais et chaud. Ses oreilles étaient devenues toutes rouges et son cerveau se mit à cogner. Il rentra dans la maison, saisit le fusil de chasse à double canon et le chargea avec des cartouches. Frénétiquement, il courut dehors et visa en mettant le fusil sur son épaule.

Il garda les yeux ouverts. Le veau broutait les tiges qu’avait laissé tomber la vache hors du camion. Attachée dans le camion, celle-ci sortait la tête pour regarder son veau. L’un des hommes s’était assis dans le camion pour partir avec la vache. Papa caressait sa barbe d’une main et, de l’autre, serrait la main du chauffeur du camion.

Ensuite, je ne me rappelle pas ce qui s’est passé. Qui Nikka avait-il visé ? Le veau, la vache, le chauffeur, son père ou lui-même ? Ou est-il toujours là avec son fusil visant une cible ?

Je veux que quelqu’un aille voir et me raconte la suite des évènements. Tout ce que je sais, c’est qu’un jour, ils ont tous décidé ensemble que…..

 

Creative Commons License


This work is licensed under a Creative Commons Attribution-NonCommercial-NoDerivatives 4.0 International License.

Mise en avant

Imli ka per (L’arbre de tamarin)

اِملی کا پیڑ

۔ شاہ زماں حق

بات اُن دِنوں کی ہے جب میری عمر تقریباً بارہ یا تیرہ سال تھی  ۔ گرمیوں کی چھُٹّیاں منانے میں اکثر ننھیال جایا کرتا تھا۔ مجھے نہ جانے بچپن سے ننھیال سے ایسا کیا لگاوٴ تھا کہ من کرتا تھا کہ وہیں اپنا وقت گزاروں۔ اپنے شہر کی چکا چوند یا آواز کی آلودگی سے ایسا محسوس ہوتا تھا جیسےمیں  کسی قفس میں رہ رہا ہوں۔ محض دس کلو میٹر  کی  دوری پر میرا ننھیال ہی  ایک ایسا مُقَدّس مقام تھا جہاں کی مَخملی زمین، شَفّاف ہوا اور خاموش سماں ذہن  میں آتے ہی  قلبی اِطمینان مُیّسر ہوتا تھا۔

نہ کوئی ہوم وَرک کی ٹینشن ، نہ کوئی  کام، بس کھاتے پیتے رہو اور خود میں  مَست رہو۔ ہر نظر جو مجھ پر پڑتی، شَفقَت اور مُسکراہٹ  لیے ہوتی ۔ ہر فردجیسے مجھے دیکھ کر خوش ہے   اور چاہتاہے کہ مُجھے اور خوش کر دے۔ کسی نے آج تک یہ نہ کہا کہ جاکر بَنیے کہ  ہاں سے فلاں چیز خرید لاوٴ۔ ہر کوئی  اُلٹا یہ پوچھتا کہ مُجھے کسی چیز کی ضرورت تو نہیں ۔ ویسے تو وہاں ہر آنے جانے والے کی آوٴ بھگت ہوتی، لیکن مجھے ایسا لگتا کہ سب سے زیادہ میری ہی پذیرائی ہوتی تھی۔

وہاں  ہمیشہ کچھ نہ کچھ کھیلنے کا شُغل رہتا۔ اُس زمانے میں نہ تو اِنٹرنیٹ تھا، نہ  فیس بُک اور نہ ہی سمارٹ فون۔  لیکن ایک لمحہ بھی بوریت کا اِحساس نہیں ہوتا تھا ۔ وہاں میرے اِتنے سارے  کَزَن تھے کہ سبھی  کے ساتھ باتوں میں آرام سے وقت گُزر جاتا۔مکان میں چھوٹے چھوٹے بچّوں کا ایک ہجوم تھا جِن کی غوں غوں اور چیں   پیں  سے طبیعت بہلتی رہتی۔چھَت کے اوپر سے پورے علاقے کا نظارہ ایسا دِلکَش معلوم ہوتا تھا جیسے پول سیزان(Paul Cézanne) یا کلود مونے (Claude Monet) کی کوئی پینٹِنگ ہو۔ جنوب میں قبرستان سے نِکلتا ہوا عالیشان ڈیڑھ سو سال پرانا ہرا گُنبَد   اور شمال میں کھیت کھلیان کے بیچ سے گزرتی ہوئی  ریل کی پَٹری نُمایاں تھیں۔ پرندے  تکونی  جُھنڈ میں  ایسے اُڑا کرتے تھے جیسے کوئی  چھوٹا طیّارہ ہو۔

دن ڈھلتے ہی طمانیت میں اِضافہ ہوجاتا۔ رات کی سیاہی میں خاموشی پورے علاقے کو اپنی لپیٹ  میں لے لیتی۔ عِشاء کے بعد اندھیرے کا یہ عالم تھا کہ کسی کا چہرہ نہ دِکھتا تھا۔ سبھی کے ہاتھوں میں موٹے موٹے ٹارچ رہتے ۔ جھینگر  کی گونجتی ہوئی گُنگُناہٹ اِس اندھیرے میں کِلاسِیکَل موسیقی کا کام کرتی۔

میرے ننھیالی مکان سے بَمُشکِل دو یا تین مِنٹ کی دوری پر ایک مسجد تھی۔  وسیع رَقبے  میں بنی اِس مسجد میں اِنتہائی  کَشِش تھی۔ اذان میں ایسی مِٹھاس تھی کہ پاوٴں خود بخود مسجد کی طرف دوڑ پڑتے تھے۔ سبھی  کی رفتار مسجد کی طرف لَپَکنے میں  ایک ہی طرح کی تھی۔

کبھی کبھی میرے ذِمّے یہ ڈیوٹی ہوتی کہ میں اپنے نانا کے ساتھ ظہر اور عِشا ء میں اُن کے ہمراہ جاتا اور ان کے ساتھ واپس آجاتا۔ دراصل اُنھیں  گھر  کے  پتھریلے زینوں پر سے اُترنے کے لیے  اور مسجد کی چوکھٹ پر اپنا پہلا قدم رکھنے کے لیے سہارے کی ضرورت ہوتی۔ اُنکے ایک ہاتھ میں چھڑی ہوتی اور دوسرے ہاتھ کی ہتھیلی میری ہتھیلی پر رَکھ کر وہ اُترتے یا چڑھتے۔ اُنھیں اِس بات کی فکر  اکثر ہوتی کہ میری ہتھیلی اُن کے اِتنے وزنی جِسم کو کیسے سَنبھال  سَکتی ہے۔ میرے اندر نہ جانے کہاں سے اتنی طاقت آجاتی کہ اُن کا وزن خود بخود سنبھل  جاتا۔ عِشا ء کی نماز مجھےسب سے زیادہ پسند تھی۔ اُس کی وجہ یہ تھی کہ عشا ءکی نماز کے بعد جب میں اور میرے کزن سُنّت اور وتر سے فارغ ہو جاتے، تو پھر میں اپنے نانا  کا انتِظار کرتا اور وہ اپنے والد گرامی کا کہ اُن کی عبادت ختم ہو جائے۔ ہماری   رِکعتیں تو منٹوں  میں ختم ہو جاتیں، لیکن اِن کی رِکعتیں بہت لمبی ہوا کرتی تھیں۔ بحر حال ہم نے غور کیا کہ ہمارے پاس پینتالیس مِنٹ اِنتظار کرنے کا وقت ہوتا تھا ۔ پھر کیا تھا، ہم مسجد کی باہری صحن میں چکّر لگاتے اور کسی موضوع پر گفتگو چھیڑ دیتے۔ کبھی کبھی چاند کی دُھندلی روشنی میں چمکتے چکنے سفید چبوترے پر ہم بیٹھ جاتے اور اگلے  روز کا کوئی پروگرام بناتے۔

میرا یہ کزن مجھ سے تین یا چار مہینے بڑا ہوگا۔ گُندمی رنگ، مُنہ پر ہلکی ہلکی اُبھرتی رُوئیں، کھڑی ناک، آنکھوں پر پتلا بھورے رنگ کا چشمہ اور گلے میں  ایک چھوٹا سا مُستطیلی سیّاہ تعویذ  لٹکتا رہتا۔ اگر ہم شہر والے کزنوں کو بغیر ٹوپی کے دیکھتا، تو فوراً ٹوکتا کہ یہاں ٹوپی پہننا لازمی ہے۔

ایک دن میں اپنے نانا کو جمعہ کی نماز میں لے کر آیا۔ نماز کے بعد میں مسجد کے سماع خانہ میں  اُن کا اِنتظار کر رہاتھا۔ چونکہ جمعہ کا  دن تھا، اس  لیےاندیشہ تھا کہ تیس پینتس مِنٹ اِنتظار کرنا ہوگا۔ میرا کزن بھی وہیں تھا، وہ بھی اپنے والد کے انتظار میں تھا۔ مُجھے دیکھتے ہی وہ میری طرف مُسکراتے ہوئے لپکا۔ آتے ہی مجھ سے کہا کہ “چلو ایک چکّر قبرستان کا لگا لیتے ہیں۔ اِن کی نماز ختم ہونے سے پہلے ہی ہم واپس آجائیں گے” ۔ قبرستان ہم بَچّوں کے لئے ایک پسندیدہ اسپاٹ تھا۔ ہر قدم پر ہرے بھرے گھنے پیڑوں کے علاوہ ایک بہت بڑا تالا ببھی تھا۔ مدرسے کے

لڑکے تالاب میں تیراکی کے نئے نئے کرتب دِکھاتے۔ قبرستان اتنا بڑا تھا کہ کئی بار جانے کےبعد بھی میں اُس کے   بیشتر حِصّے سے ناواقِف تھا۔

خیر، میرے کزن کا آئیڈیا بُرا نہیں تھا۔ قبرستان صرف دو منٹ کے فاصلے پر تھا۔ اوپر سے اِس چِلچِلاتی دھوپ میں قبرستان کے تالاب اور گھنے پیڑوں کے بیچ چہل قدمی کا ایک الگ ہی لُطف تھا۔ قبرستان میں داخِل ہونے کےبعد، ہم کچھ مُقدّس قبروں کو سلام پیش کرتے ہوئے آگے بڑھے، تب میرے کزن نے ایک نئی پیشکش کر دی۔ “بتاوٴ تم نے کبھی اِملی چَکھی ہے ” ؟

اِملی کا نام سُنتے ہی مُنہ اپنے آپ کھٹّا ہو گیا۔ میں نے پوچھا، “اِس بیچ قبرستان میں اِملی کھانے کہاں جائیں گے” ؟

میرے کزن نے ہنستے ہوئے کہا،”کہیں جائیں گے نہیں، بَس تھوڑی ہی دور پر ایک املی کا پیڑ ہے، وہیں سے توڑ کر کھائیں گے” ۔

میرا جی اِملی کھانے کو تَڑَپ اُٹھا۔

کُچھ ہی قدموں پر اِملی کا سیاہ لَمبا قُطُب نُما دَرَخت مِلا۔ اُس کے موٹے تنے پر بے شُمار جُھریوں  سے گُماں ہوتا تھا کہ پیڑ بہت پرانا ہے ۔ میں نے نظر اوپر کی تو دیکھا کہ اِملی کے گچھے  لَٹْک رہے ہیں ۔ پیڑ کے نیچے ہرے، زرد اور پژمردہ پتّوں کا جماوٴ تھا۔

کھٹّی شے کا تو میں شوقین نہیں تھا، لیکن مُنہ میں جب کسی چَٹخارے کی لالَچ  پیدا  ہو جائے، تو پھر کیا کہنے۔ ہم دونوں نے وہیں سے کچھ کنکر اُٹھائے اور شاخوں پر نِشانہ مارنا شروع کر دیا۔ میرے کزن کا نشانہ مجھ سے بہتر تھا۔ ایک املی سے بھری ہوئ شاخ چٹخ کر ہمارے سامنے آ گِری۔ میرے کزن نے پہلے تو مجھے املی کے فوائد پر ایک چھوٹا سا لیکچر دیا  پھر اُس نے مجھے املی کھانے کا طریقہ بتایا ۔

جب املی کھاکر طبیعت سیر ہو چکی، تب مجھے میرے نانا کی یاد آئی ۔ میں نے کزن کو کہا کہ اب کافی دیر ہو چُکی ہے، واپس چلنا چاہیے ۔ ہم دونوں مسجد کی طرف تیز قدموں سے لپکے۔ مسجد میں ہر طرف سنّاٹا تھا۔ یقیناً نانا  جا چُکے تھے ۔ مجھے اپنے اوپر کافی غُصّہ آیا۔ املی کے چکّر میں بہت بڑی کوتاہی ہو گئی، کہیں کوئی  آفت نہ  آجائے میرے اوپر۔  میرا رُواں رُواں کانپ رہا تھا۔

جب گھر پہنچا تو پھاٹک کی آڑ میں سے دیکھا کہ میرے نانا صحن کی چوکی پر بیٹھے تھے اور  اُن کے سامنے سبھی لوگ خاموش تھے۔ جب میں اندر داخل ہوا، تب نانا نے والدہ سے کہا کہ “یہ پتہ نہیں کہاں چلے گئے تھے ؟ نماز ختم ہونے کے بعد جب میں مسجد کی چوکھٹ پر آیا تو یہ نظر نہیں آئے۔ پھر ایک

مدرسے کے لڑکے کو اِشارہ کیا جس کے ساتھ میں گھر تک پہنچا” ۔

اَب میں کیا بتاتا کہ میں کیا طُرفہ گُل کِھلا کر آ رہا ہوں۔

اُس دِن کے بعد سے میں آج تک املی کے پیڑ کے پاس دوبارہ نہیں گیا۔ بلکہ املی  کھانا  ہی تَرک کر دیا ۔

بابائے انقلاب – Le père la révolte de Montéhus (1872-1952)

 

بابائے انقلاب

Le père la révolte

par

Gaston Mardochée Brunswick dit Montéhus (1872-1952)

 

 

 

Traduit du français en ourdou par

Shahzaman Haque

Plidam, Inalco.

 

۔مونتے اُوس

فرانسیسی گُلُوکار

۔ ترجمہ نگار

شاہ زماں حق

مجھے لوگ بلاتے ہیں بابائے انقلاب

مجھے لوگ بلاتے ہیں پاگل بُڈّھا

کیونکہ میں آپے سے ہو جاتا ہوں باہر وقتاً فوقتاً

میری جھنجھلاہٹ کا کوئی علاج نہیں

وہ کہتے ہیں کہ میں ہوں انقلابی

کہ میں ہوں انتشاری ، و اللہ عالم اور نا جانے کیا کیا

میں خبیث نہیں ہوں، بلکہ ہوں اس کا برعکس

میں مِن و عَن عیسٰی کی مانند جو مرا صلیب کے اوپر

پیارے فوجیو

آرزو کر اَمن کی نا کہ جنگ کی

یہ جان لو میرے بندو !

کہ جنگ ہے رنج و مصیبت

نگاڑے بجاؤ

تاکہ سرحدوں میں سمجھوتا برقرار رہے

یہ بھی یاد رکھو

کہ سرحد کے دونوں طرف منتظر ہیں تمہارے اہل و عیال

 

میں نے جنگ دیکھی ہے ہر بوڑھوں کی طرح

ابھی تک میں دہشت زدہ ہوں

میں نے دیکھا قتل ہوتی بوڑھی مائیں

اور سُنی وہ چیخ جو بیان نہیں کر سکتا

اِس لیے میں دیتا ہوں  پیغام

امن انسان محبت انسان

میرا دل باغ باغ ہوتا ہے

جب لوگ سُنتے ہیں میری باتوں کو

یہ وہ خوشیاں ہے جس کی میں تبلیغ کرتا ہوں

تُم نے نظر گڑائی میری قمیض کے کاج پر

کیونکہ اُس میں ٹکا ہے تمغہ جُرَّت

میں نے اِسے نہیں جیتا کسی جنگ میں

لیکن بطور محافظ

میں نے اپنی جان سینکڑوں دفعہ داؤں پر لگائی

دوسروں کے لیے موت کو مات دی

اپنی روح اور ضمیر کا واسطہ ہے  کہ

بجائے جان لینے کے میں نے دشمن کو بخشا

 

 

 

<a rel=”license” href=”http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/”><img alt=”Licence Creative Commons” style=”border-width:0″ src=”https://i.creativecommons.org/l/by-nc-sa/4.0/80×15.png” /></a><br />Ce(tte) œuvre est mise à disposition selon les termes de la <a rel=”license” href=”http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/”>Licence Creative Commons Attribution – Pas d’Utilisation Commerciale – Partage dans les Mêmes Conditions 4.0 International</a>.

 

 

 

 

 

 

 

 

پریاں

پریاں

 

– شارل پیرو (1703-1628)

ترجمہ نگار

– صبا بشیر، زینب فیاض، شاہ زماں حق

ایک زمانے کی بات ہے کہ ایک بیوہ عورت کی دو بیٹیاں تھیں۔ بڑی بیٹی کا مزاج اور چہرہ اپنی ماں سے اتنا مشابہت رکھتا تھا کہ وہ بالکل اپنی ماں کے طرح لگتی تھی۔ دونوں ماں بیٹی اتنی بدمزاج اور اس قدر مغرور تھیں کہ کوئی ان کے ساتھ رہنا گوارا نہیں کر تا تھا۔ چھوٹی بیٹی باپ کی مانند رحمدل اور ایماندار تھی۔ چونکہ فطری طور پرہم اپنے جیسوں کی طرف مائل ہوتے ہیں، بڑی بیٹی  اپنی ماں کی چہیتی تھی جبکہ اِس کے برعکس چھوٹی بیٹی سے وہ نفرت کرتی تھی۔ ماں اسے باورچی خانے میں ہی کھانا کھلاتی تھی اور مسلسل اس سے کام کرواتی تھی۔

اس کے علاوہ ماں نے اس بچی کے ذمہ ایک اور کام بھی لگایا تھا اور وہ یہ کہ روز اسے دس فرلانگ کی دوری سےدو دفعہ پانی بھر کر گھر لانا پڑتا تھا۔ ایک روز جب وہ ایک چشمہ نوش کے پاس بیٹھی تھی تب ایک لاچارعورت اس کے پاس آئی۔ آتے ہی اس نے لڑکی سے پانی پلانے کی درخواست کی۔”جی یقیناً”،  کمسن لڑکی نے کہا۔ اپنے گھڑے کو فوراً کنگھالتے ہوئے اس نے چشمے کی سب سے عمدہ جگہ سے پانی نکالا۔ پھر اس نے گھڑے کو اس طرح پکڑ کر ٹیڑھا کیا کہ وہ عورت آرام سے پانی پی سکے۔

پانی پینے کے بعد نیک طبیعت عورت نے کہا: “تم اتنی  پیاری اور خدمت گزار ہو، میرا دل بہت چاہ رہا ہے کہ میں تمہیں اپنی طرف سے  کوئی انعام دوں”۔

دراصل وہ ایک پری تھی جس نے ایک لاچار عورت کا بھیس بدل لیا تھا تا کہ وہ معلوم کر سکے کہ یہ لڑکی  کس  حد تک خدمت گزار ہے۔

میں تمہیں یہ انعام دیتی ہوں کہ جب بھی تم کوئی جملہ ادا کرو تمہارے منہ سے پھول یا کوئی قیمتی پتھر جھڑے “۔

جب یہ لڑکی گھر لوٹی تب اس کی ماں نے اسے  پانی کے چشمے سے کافی وقفے سے واپس آنے پر ڈانٹ پلائی۔

امی مجھے اتنی تاخیر کے لیے معاف کریں”، بیچاری لڑکی نے کہا۔”

اور یہ کہتے ہوئے اس کے منہ سے دو گلاب کے پھُول، دو موتیاں اور دو بڑے بڑے ہیرے نکلے  ۔

یہ میں کیا دیکھ رہی ہوں!” ماں حیران ہو کر بولی۔”

“مجھے لگتا ہے کہ اس کے منھ سے موتیاں اور ہیرے جھڑ رہے ہیں ۔ یہ کہاں سے آیا میرے بیٹی؟”

 یہ پہلی بار تھا کہ ماں نے  اُسے بیٹی کہہ کر مخاطِب کیا۔ بیچاری بچّی نے معصومیت سے پورا واقعہ سنایا جب کہ اس دوران اس کے منھ سے لا تعداد ہیرے جھڑتے رہے۔

سچ میں؟”، ماں نے تعجُّب سے کہا۔”

 وہاں مجھے اپنی بڑی بیٹی کو لازماً بھیجنا پڑے گا” ماں نے دل میں کہا ۔”

-:یہ سوچ کر ماں اپنی بڑی بیٹی کے پاس گئی اور اسے کہا

یہ لو اپنی اوڑھنی، تم نے غور نہیں کیا کہ جب تمہاری بہن بولتی ہے تو اس کے منہ سے ہیرے جواہرات “

جھڑتے ہیں۔ کیا تمہیں یہ انعام ملنے پر خوشی نہیں ہوگی؟ تمہیں صرف چشمے سے میٹھا پانی نکالنا ہے اور جب

“وہ لاچار عورت تم سے پانی طلب کرے تو اس کی خوب خدمت کرنا ہے۔ میں چاہتی ہوں کہ تم وہاں جاؤ

 بڑی بیٹی کا دل نہیں مانا لیکن ماں کے فرمان کے سامنے وہ مجبور تھی ۔ اس نے گھر میں پڑی ہوئی سب سے خوبصورت چاندی کی بوتل اٹھائی اور  اپنے منہ کو سکیڑتے ہوۓ چشمے کی طرف چل پڑی۔ ابھی وہ چشمے پر پہنچی ہی تھی کہ اس کی نظر ایک شاندار کپڑوں میں ملبوس خاتون پر پڑی۔ وہ خاتون جنگل سے نمودار ہوئی اور چلتے چلتے چشمے پر آکر اس نے پانی پینے کی طلب ظاہر کی۔ یہ وہی پری تھی جو اس کی چھوٹی بہن کو نظر آئی تھی لیکن اب اس نے ایک شہزادی کا روپ دھارا ہوا تھا کیوں کہ وہ جاننا چاہ رہی تھی کہ لڑکی کس حد تک بے ایمان ہے۔

 کیا میں تجھے پانی دینے کے لیے آئی ہوں؟،شاید میں بالکل اسی مقصد سے محترمہ کے لیے چاندی کی بوتل لائی ہوں ؟” مغرور لڑکی  کرخت آواز میں بُدبُدائی۔

تم میں قطعاً خدمت کا  جذبہ نہیں ہے”، پری نے اپنا غصہ ضبط کرتے ہوئے کہا۔

چونکہ تم میں فرماں برداری کا جذبہ نہ ہونے کے برابر ہے اس لیے میں تمہیں شراپ دیتی ہوں، تم جو بھی لفظ منھ سے ادا کروگی، تمہارے منھ سے سانپ یا  مینڈک برسیں گے”۔

“!بڑی بیٹی جب گھر پہنچی تو ماں اس کے انتظار میں تھی، اسے دیکھتے ہی چیخ پڑی “ارے میری لعل

 جی ہاں میری ماں !” سنگ دل  بیٹی نے اپنے منہ سے دو زہریلے سانپ اور دو مینڈک کو اگلتے ہوئے جواب دیا۔

 یا خدا”، ماں چیختے ہوئی بولی، یہ کیا غضب ڈھا گیا میری بچی ؟ یہ سب تیری بہن کا قصور ہے ۔ میں اس کا حساب لیتی ہوں” اور فوراً وہ اس کو پیٹنے کے لیے دوڑی۔ بیچاری چھوٹی بیٹی بھاگم بھاگ قریب کے جنگل میں جا کر پناہ لی۔

اس دوران ایک بادشاہ کا بیٹا شکار سے واپس آرہا تھا کہ اس نے جنگل میں ایک غمگین اور اداس لڑکی کو دیکھا۔ شہزادے نے اُس لڑکی سے دریافت کیا کہ وہ کیوں تنہا ہے اور آنسو بہانے کی وجہ کیا ہے۔

جناب عالی، میں کیا بتاؤں میری ماں نے مجھے گھر سے بے دخل کر دیا”، چھوٹی بیٹی نے بِلکتے ہوئے کہا ۔”

شہزادے نے دیکھا کہ اُس لڑکی کے منہ سے موتیاں اور ہیرے جھڑ رہے ہیں،  اُس نے استفسار کیا کہ یہ کیسے ممکن ہے۔ لڑکی نے پوری کہانی بیان کی۔ شہزادے کے دل میں خیال آیا  کہ یہ نایاب خوبی ان تمام چیزوں سے زیادہ قیمتی ہے جو ہم بطور جہیز شادی میں کسی کو دے سکتے ہیں۔   وہ لڑکی کو اپنے ہمراہ والد کے محل لے گیا اور وہاں جاکر اُس سے شادی رچائی ۔

دوسری طرف اس کی بڑی بہن سے اُسکی ماں نے اتنی نفرت برتی کہ اسے گھر سے نکال دیا۔ اور جب کہیں بھی اسے پناہ نہ ملی تو وہ جنگل کی طرف نکلی اور وہیں اس کی موت ہوگئی۔

الوداعی نظم

 

الوداعی نظم

فار‏غین اردو انالکو، پیرس  ۲۰۲۲کے نام

 

فرحان احمد

اردو لیکچرر انالکو

(۲۰۱۹-۲۰۲۲)

اس شمع علم و عرفاں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

اس علم و ادب کے دامن میں پر کیف نظارہ ہوتا ہے

ہر شے کی مکمل آزادی خوش بخت گزارا ہوتا ہے

پھولوں کی مہک چڑیوں کی چہک ہر سمت سنائی دیتی ہیں

 

جھرنوں کی کھنک جگنو کی چمک ہر سمت دکھائی دیتی ہیں

 اس علم و ادب کے مرکز سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

تعلیم یہاں کی لوگوں کو تہذیب کا درس سکھاتی ہے

تاریک دلوں میں نورانی قندیل یقین جلاتی ہے

پروردہ یہاں کے دنیا میں تبلیغ کا سامان ہوتے ہیں

مسکین کے زخموں کا مرہم دکھ درد کا درماں ہوتے ہیں

 

اس شمع فروزاں محفل سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

زینب کی چمکتی آنکھوں میں خوابوں کا تصادم ہوتا ہے

باتوں میں نصیحت کا پرتو معنوں میں تلاطم ہوتا ہے

کہتے ہیں صباح کی جدوجہد بیکار نہ یوں ہی جائے گی

اک روز وہ اپنی محنت کا ان شاء اللہ  پھل پائے گی

 

ان معصوموں کی کاوش سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

اس لمحے جدائی کے باعث زینب تو بہت رنجیدہ ہے

افسردہ ہے جسم و جان و جگر اور آنکھ بہت نمدیدہ ہے

اس باد صبا سے پوچھے کوئی کیوں چھوڑ کے جانے والی ہے

ہنستے کھلتے اس گلشن کو ویران بنانے والی ہے

 

یادوں سے جڑے ان لمحوں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

آدغیاں کے چہرے پر مسکان نمایاں رہتی ہے

باتوں میں حلاوت شیرینی افکار میں وسعت رہتی ہے

ان گلدستوں میں رنگ وبو پنہاں ہے اسی گہوارے کا

تہذیب و تمدن دکھتا ہے ہر سمت اسی شہ پارے کا

 

اس دلکش موہنی منظر سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

کیا وسیم میاں کی بات کریں وہ فن میں اپنے ماہر ہیں

جب چاہیں ہنسا دیں لوگوں کو وہ چلتے پھرتے ساحر ہیں

مستقبل کی سب زنجیریں کائنات سے جا کے ملتی ہیں

اور راز و نیاز کی سب باتیں اس در پہ ہی جاکے کھلتی ہیں

 

ان مست و مگن پروانوں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

مروہ نے بنائی ہے اپنی اوروں سے الگ پہچان بہت

کردار شگفتہ ہونے سے لوگوں میں ہے اسکی شان بہت

ویسے تو حجاب کی سادہ دلی لوگوں میں بہت مقبول رہی

پر اسکی توجہ پڑھنے پر کہتے ہیں سدا مبذول رہی

 

ان روشن چاند ستاروں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

کہتے ہیں عمل کے عزم سے ہی امید کی کرنیں روشن ہیں

وابستہ اسی کے سائے میں افکار و خیال کے مدفن ہیں

کچھ عرصہ جو اسکے ساتھ رہا وہ بھول نہ اس کو پائے گا

یادوں میں اسکی راتوں دن بس یوں ہی اشک بہائے گا

 

بیتے ہوئے اک اک لمحوں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

فرزانہ میڈم سے یاں کا ہر بچہ گھل مل جاتا ہے

خوش باش اداؤں سے انکی ہر غنچہ و گل کھل جاتا ہے

اس گلشن کے ہر گوشے میں   حق شاہ ز مان کی کاوش شامل ہے

ہر شخص کو پوری آزادی پڑھنے کی یہاں پہ حاصل ہے

 

ان علم کے بادہ خواروں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

فرحان تو علم کی چاہت میں ہر آن سفر پر رہتا ہے

چڑیوں کی طرح ہر روز نئی شاخوں پہ بسیرا کرتا ہے

اس گلشن کے ہر غنچے سے بے لوث محبت ہے اس کو

قربان ہے اس پہ جان و دل اس درجہ محبت ہے  اس کو

 

واللہ اب اس میخانے سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے –

Rire et résistance dans la littérature ourdoue au Pakistan

 

Colloque international

 Le pouvoir du rire – rire du pouvoir

Humour, Discours et Politique

 

Université de Craiova

 

19-20 mai 2022

Résumé :

Cette communication portera sur la place de l’humour au sein de la littérature ourdoue, et plus particulièrement dans l’environnement pakistanais suite à la post-colonisation et à la partition de l’Inde en deux pays –l’Inde et le Pakistan en 1947. Pendant les trois régimes militaires, il nous semble opportun de s’intéresser à la période de 1977-1987 (de Muhammad Zia-ul-Haq), lorsque l’humour était devenu un outil de résistance par une poignée d’écrivains pakistanais, et notamment par un auteur ourdouphone, Mushtaq Ahmad Yusufi (1923-2018). Si, d’une part, Zia-ul-Haq permet de prospérer le genre de l’humour dans la littérature ourdoue, fort probablement pour détourner l’attention de son peuple de l’état politique de son pays, de son côté, Yusufi crée sa niche étant le rare écrivain à sensibiliser le peuple contre le régime militaire par le truchement de l’humour.

 

Télécharger ici : Rire et Résistance dans la littérature ourdoue au Pakistan | Zenodo

 

اردو سے میری محبت: دو سیاسی شخصیات جناح اور نہرو کی کہانی

 

اردو سے میری محبت

دو سیاسی شخصیات جناح اور نہرو کی کہانی

 

۔ شاہ زماں حق

انالکو، پیرس، فرانس

 

Indian language teaching at Inalco : A brief summary

Visit of H.E. Mr. Javed Ashraf, Ambassador of India to France

INALCO

2, rue de Lille

75007 Paris

March 9, 2020

Speech title : Indian language teaching at Inalco : A brief summary

 

 

Shahzaman Haque

Co-director, Department of South Asia & Himalaya

INALCO, Paris.

 

 

Your Excellency,

President and Vice-Presidents of the University,

President of the Inalco Foundation,

And my dear, esteemed colleagues,

 

I am very honored to have the privilege to speak to you this evening on behalf of Inalco about the historical importance of Indian languages, a subject that is especially close to our institution’s heart.

As Edward Sapir once wrote, “Language is the most massive and inclusive art”. That wonderful art facilitates mutual understanding and continues to inspire thousands of French and international students to learn languages, especially Indian languages, at our esteemed institution. History is the witness that we have demonstrated through our energy and our efforts a deep commitment to promoting knowledge and mutual understanding by enhancing the study of all aspects of the East.

At Inalco, we are proud to offer the opportunity to meet and interact with people from over one hundred and twenty countries within our student body and faculty, and one of those countries is India. It is my very great pleasure to tell you that, for over 200 years, we have attracted students from France and beyond to study Indian languages, such as Sanskrit, Bengali, Hindi, Tamil, Telegu, and Urdu, all of which are recognized as official languages by the Constitution of India.

Thanks in no small part to Inalco, the 19th century saw France become Europe’s central hub of Indian studies, attracting scholars who were motivated by an intense passion to learn Indian languages, which they intended to use to understand the mysteries of the subcontinent’s uniquely rich civilizations. Just as Nalanda University in India attracted students from abroad in the 4th century, so, from the early 19th century onwards, European intelligentsia flocked to Inalco.

One of the first Indian languages taught here was Sanskrit. Its early European students saw the language as the skeleton key to unlock the academic treasures, cultural knowledge, and religious insights of the subcontinent. Among their number were famous scholars, such as the German orientalist, Franz Bopp, who came to this very building in 1812, followed by his compatriots Julius Klaproth in 1815 and Auguste Schlegel in 1823. The celebrated Norwegian orientalist, Christian Lassen also spent three years here learning Sanskrit from 1823 to 1826.

Understanding Sanskrit remains of great importance for linguists and grammarians all over the world, as well as for scholars of India’s classical period and those who wish to understand the doctrines and rituals of Hinduism. We are proud to still teach it at Inalco to this day.

Hindi and Urdu have a particularly rich history and bond with our Institution. The two languages were first taught here under the name “Hindustani” in 1828. At that time, Inalco was the only European institution teaching this language.

The statue which we see in the courtyard is of Silvestre de Sacy, to whom we are indebted, as he had a great connection with Indian languages. It was his idea to create a Chair of Hindustani in 1830. Lessons in Hindustani were started in 1828 by his student, Garcin de Tassy, a great scholar of the language. De Tassy taught Hindustani using both the Devanagari and the Perso-Arabic scripts. He remains a towering figure in the history of Indian languages in France because he was the first Head of the Chair of Hindustani at Inalco.

To this day, Hindi continues to be the most popular course offered by the South Asian Department. The language now has over 600 million speakers worldwide, and our course attracts not only French students but others from European countries such as Poland, Italy, and The Netherlands. Last year, 110 students were enrolled on Hindi language courses, making it the fourteenth most popular language in terms of enrolment among the 100 oriental languages taught at Inalco.

Urdu was originally taught alongside Hindi, but from 1962, a separate course was established and a Chair of Urdu created, a position that I have been very honored to occupy since 2015.

Tamil language teaching started here in 1868, after Garcin de Tassy, argued in favor of its introduction. Due to a lack of professors, there was a gap from 1871 to 1879. However, from that date onwards, Tamil language teaching benefited from a growing interest in Dravidian studies and Classical Tamil. It was, at one time, used to train public servants for the French settlements in India.

Bengali was not introduced at Inalco until relatively late, 1930 to be precise. Coincidentally that was the very year when the great Bengali poet, painter, philosopher, and Nobel-prize winner Rabindranath Tagore came to Paris. Unfortunately, the teaching of Bengali was interrupted after just two years. However, it resumed from 1964 and remains a part of our Indian languages offering to this day.

The teaching of the Telegu language started here in 1973 and, from 1982, it has had its own chair.

Apart from the numerous renowned French professors who have taught Indian languages here, Inalco has had the honor of recruiting many Indian-origin professors to teach the five Indian languages that we offer. Our teaching staff have come from more than 10 different cities or states in India, including Agra, Allahabad, Almora, Kolkata, Nagpur, Pune, Simla, Bihar, Chennai, Delhi, Hyderabad, Madhya Pradesh, Pondicherry and Rajasthan.

Currently, we are the only European institution offering fully-fledged bachelor’s, master’s, and Ph.D. programs in five Indian languages: Bengali, Hindi, Tamil, Telegu, and Urdu. This means that we have the unique privilege of being the only place in Europe that can compete with the offerings of North American universities when it comes to Indian languages.

Your Excellency, building on our esteemed past and our unique present position, we are highly committed to forging further alliances with Indian universities, sending our students to India on exchange programs, and enhancing long-term, cutting-edge scientific cooperation in the fields of literature, language, and the humanities.

Thank you, once again, for taking the time to listen to the history of Indian language teaching here at Inalco. For over 200 years, we have been proud to be facilitating deeper connections between India and the rest of the world. We look forward to continuing to do the same in the future, forging ever stronger collaborations with our colleagues in universities across India to promote knowledge and the culture of the subcontinent for the common benefit of humanity.

Thank you.

Le petit dictionnaire des mots religieux d’ourdou

Auteur : Shahzaman Haque

 

 

Liste des mots provisoire

 

 

 

عاقبت

ثواب

قبر

عذاب

کروٹ کروٹ جنت

Ourdou-français

د

religion n.f.  n.m.                                                          دِین

ق

tombe n.f.  n.f.                                                               قَبر

 

ل

vivre sans religion; mode de vie d’un athée لا دینی

 

ن

poème avec des louanges sur le prophète Mahomet نَعت

Le soldat de Marsala – Gustave Nadaud

 

 

مارسالہ کا فوجی

 

 

گُستاو نادو
مُترجم – شاہ زماں حق

ہماری تعداد تھی ہزاروں میں

ہم آئے تھے اٹلی اور نواحوں سے

سِسلی کی جھڑپوں میں جا رہے تھے

گاریبالدی کی قیادت میں

 

میں ایک دِن میدان میں اکیلا تھا

جب سامنے اپنے پاتا ہوں

ایک جوان بمشکل بیس سالہ

زمرُّد سی پوشاک پہنے ہوئے

 

میں نے دیکھا کہ اُس کی بندوق کی نال

میری جانب نشانہ سادھنے لگی

وہ اپنے فرض سے مجبور تھا

میں نے بھی اپنی بندوق تان لی

 

اُس نے چار قدم بڑھایا

میں نے بھی چار بڑھائے

وہ ناقص نشانہ لیتا ہے

میں چست نشانہ سادھتا ہوں

آہ! لعنت ہو جنگ پہ

 

جو ایسے کام کرانے پر ہمیں مجبور کرے

کوئی بھر دے ہمارے جام کو

مارسالہ کی شراب سے

 

وہ خود کی طرف پلٹ گیا

کیوں اُس کا نشانہ چُوک گیا؟

بیچارہ لڑکا! وہ پڑ گیا تھا پیلا

میں دوڑ کے اُسکی جانب لپکا

آہ ! مجھے جیت کی پروا نہ تھی

میں نے اُس سے معافی مانگی

 

وہ پیاسا تھا

میں نے اُسے پانی پِلایا

ایک ہی سانس میں وہ پی گیا میری مشکیزہ

پھر ایک پیڑ کا سہارا دے کر

میں نے اُسکی سرد پیشانی کو پونچھا

کاش کہ وہ صرف زخمی ہی ہوتا

 

میں نے اُس کے زخم پر پٹی لگانا چاہا

میں نے اُس کی سفید وردی کھولی

گولی, بغیر خون کا قطرہ بہائے

سینا چیڑتی ہوئی پَسلی میں گھس گئی تھی

 

چادر اور قمیض کے درمیان

خون کے رنگوں میں گھُلا تھا خاکہ

مسکرا رہی تھی شفقت سے

ایک بوڑھی خوش لِباس عورت

 

پھر ، خدا معلوم میں کس طرح سے

یہ سب ہوتا دیکھوں گا

منظر جوان فوجی کے مرنے کا

اور بوڑھی عورت کے رونے کا

 

آہ! لعنت ہو جنگ پہ

جو ایسے کام کرانے پر ہمیں مجبور کرے

کوئی بھر دے ہمارے جام کو

مارسالہ کی شراب سے

 

 

فرانسیسی گلوکار اور شاعرگُستاو نادو نے یہ جنگ مخالف گیت ۱۸۷۲ میں لکھی جس پر پہلے پابندی لگی تھی ۔

<a rel=”license” href=”http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/”><img alt=”Licence Creative Commons” style=”border-width:0″ src=”https://i.creativecommons.org/l/by-nc-sa/4.0/88×31.png” /></a><br />Ce(tte) œuvre est mise à disposition selon les termes de la <a rel=”license” href=”http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/”>Licence Creative Commons Attribution – Pas d’Utilisation Commerciale – Partage dans les Mêmes Conditions 4.0 International</a>.

Tant Pis – Jacques Prévert

 

 بے حد افسوس

-ژاک پریویر
مترجم –شاہ زماں حق
 

اَندَرلےکرآؤاُس کیچڑ میں لتھڑے ہوئے کتےکو

قابلِ افسوس ہیں  وہ  لوگ  جن کو کتّا یا کیچڑ  ناپسندہے

افسوس ہے اُن پر جو کیچڑپسند نہیں کرتے

وہ نہیں سمجھ پاتےہیں

جو  کتے کو نہیں جانتے

کتّےکو اندر لےکرآؤ

کہ وہ خود کو حرکت  دے سکے

ہم کتّا  صاف کرسکتےہیں

ہم کیچڑ صاف کرسکتےہیں

اور  ہم پانی کو بھی صاف کرسکتےہیں

ہم انہیں صاف نہیں کرسکتے

جو کہتے ہیں کہ اُن کو کتّا پسندہے

مگر شر ط یہ ہے کہ ۔ ۔ ۔ ۔

کیچڑمیں لتھڑا ہوا کتّا صاف ہوتا ہے

کیچڑ  بھی صاف  ہوتا ہے

 کبھی کبھی پانی بھی صاف ہوتاہے

جو کہتےہیں  مگر شرط یہ ہے کہ ۔۔۔

وہ لوگ صاف  نہیں ہوتے

قطعی نہیں ۔

ژاک پریویر (پ ۱۹۰۰، وفات ۱۹۷۷) فرانس کےمشہور شاعر اور منظر نویس تھےجنہوں نےاپنی آسان الفاظ پر مشتمل نظموں سےدنیا بھرکےفرانسیسی قارئین میں ایک خاص جگہ بنا لی تھی۔ اُن کی نظمیں فرنچ سکول کےنصابی پروگرام میں  شامل  ہیں ۔

 

<a rel="license" href="http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/"><img alt="Licence Creative Commons" style="border-width:0" src="https://i.creativecommons.org/l/by-nc-sa/4.0/88x31.png" /></a><br />Ce(tte) œuvre est mise à disposition selon les termes de la <a rel="license" href="http://creativecommons.org/licenses/by-nc-sa/4.0/">Licence Creative Commons Attribution - Pas d’Utilisation Commerciale - Partage dans les Mêmes Conditions 4.0 International</a>.

La grève des mères – Montéhus

ماؤں کی ہڑتال

La grève des mères 

 

Montéhus (1872-1952)

Traduit par Shahzaman Haque

 

چونکہ آگ اور بندوقيں

گولياں اور توپيں

واديوں، ميدانوں ميں

بچھا ديتی ہيں، لاشوں کا جال

 

چونکہ بَشَرہے خون کا پياسا

اور منکر وہ بھائی چارے کا

!اُٹھو عورتوں! کام پر چَلو عورتوں

اب تمہیں بچانی ہے انسانیت

 

زمین کو آباد کرنے سے منع کرو

بچّوں کو پیدا کرنا بند کرو

ماؤں کی ہڑتال شروع کرو

ماؤں کی ہڑتال شروع کرو

 

جَلّادوں کو اپنی مَنشا ظاہر کرو

اپنے جسم و خون کا دفاع کرو

جنگ مُردہ باد، ظالم مُردہ باد

جنگ مُردہ باد، ظالم مُردہ باد

 

تم نے بيس سال پسينہ بہايا

اپنے بيٹے کو مرد بنانے ميں

جبکہ کسی بدبخت فوجی نے

اسے برباد کر ديا، کچھ لمحوں ميں

 

وہ بچّہ جو تُمہاری اُمید تھا

جِسے تُم نے اپنا دُودھ پیلایا

وہ تُجھے بوڑھا اور بے خوراک چھوڑ کر

خود بڑی سَخت موت مر گيا

 

کیا آسمان کی سرحدیں ہوتی ہیں؟

کیا وہ پوری دُنیا کو ڈھک نہیں لیتا ؟

پھر کیوں ہیں زمیں پر رکاوٹیں ؟

کیوں ان گنت کی سولی چڑھے؟

 

!قتل جیت کا نام نہیں

ملعون ہو موت کی فصل لگانے والا

نہیں چاہئیے تُمہاری سَر بُلندی کے لیے

اپنے عزیز بچوں کی قُربانی۔

 

 

 فرنچ میں یہ نظم یہاں پر سُنیں

Rechercher dans OpenEdition Search

Vous allez être redirigé vers OpenEdition Search