La grève des mères – Montéhus

ماؤں کی ہڑتال

La grève des mères 

 

Montéhus (1872-1952)

Traduit par Shahzaman Haque

 

چونکہ آگ اور بندوقيں

گولياں اور توپيں

واديوں، ميدانوں ميں

بچھا ديتی ہيں، لاشوں کا جال

 

چونکہ بَشَرہے خون کا پياسا

اور منکر وہ بھائی چارے کا

!اُٹھو عورتوں! کام پر چَلو عورتوں

اب تمہیں بچانی ہے انسانیت

 

زمین کو آباد کرنے سے منع کرو

بچّوں کو پیدا کرنا بند کرو

ماؤں کی ہڑتال شروع کرو

ماؤں کی ہڑتال شروع کرو

 

جَلّادوں کو اپنی مَنشا ظاہر کرو

اپنے جسم و خون کا دفاع کرو

جنگ مُردہ باد، ظالم مُردہ باد

جنگ مُردہ باد، ظالم مُردہ باد

 

تم نے بيس سال پسينہ بہايا

اپنے بيٹے کو مرد بنانے ميں

جبکہ کسی بدبخت فوجی نے

اسے برباد کر ديا، کچھ لمحوں ميں

 

وہ بچّہ جو تُمہاری اُمید تھا

جِسے تُم نے اپنا دُودھ پیلایا

وہ تُجھے بوڑھا اور بے خوراک چھوڑ کر

خود بڑی سَخت موت مر گيا

 

کیا آسمان کی سرحدیں ہوتی ہیں؟

کیا وہ پوری دُنیا کو ڈھک نہیں لیتا ؟

پھر کیوں ہیں زمیں پر رکاوٹیں ؟

کیوں ان گنت کی سولی چڑھے؟

 

!قتل جیت کا نام نہیں

ملعون ہو موت کی فصل لگانے والا

نہیں چاہئیے تُمہاری سَر بُلندی کے لیے

اپنے عزیز بچوں کی قُربانی۔

 

 

 فرنچ میں یہ نظم یہاں پر سُنیں

Rechercher dans OpenEdition Search

Vous allez être redirigé vers OpenEdition Search