الوداعی نظم

 

الوداعی نظم

فار‏غین اردو انالکو، پیرس  ۲۰۲۲کے نام

 

فرحان احمد

اردو لیکچرر انالکو

(۲۰۱۹-۲۰۲۲)

اس شمع علم و عرفاں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

اس علم و ادب کے دامن میں پر کیف نظارہ ہوتا ہے

ہر شے کی مکمل آزادی خوش بخت گزارا ہوتا ہے

پھولوں کی مہک چڑیوں کی چہک ہر سمت سنائی دیتی ہیں

 

جھرنوں کی کھنک جگنو کی چمک ہر سمت دکھائی دیتی ہیں

 اس علم و ادب کے مرکز سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

تعلیم یہاں کی لوگوں کو تہذیب کا درس سکھاتی ہے

تاریک دلوں میں نورانی قندیل یقین جلاتی ہے

پروردہ یہاں کے دنیا میں تبلیغ کا سامان ہوتے ہیں

مسکین کے زخموں کا مرہم دکھ درد کا درماں ہوتے ہیں

 

اس شمع فروزاں محفل سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

زینب کی چمکتی آنکھوں میں خوابوں کا تصادم ہوتا ہے

باتوں میں نصیحت کا پرتو معنوں میں تلاطم ہوتا ہے

کہتے ہیں صباح کی جدوجہد بیکار نہ یوں ہی جائے گی

اک روز وہ اپنی محنت کا ان شاء اللہ  پھل پائے گی

 

ان معصوموں کی کاوش سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

اس لمحے جدائی کے باعث زینب تو بہت رنجیدہ ہے

افسردہ ہے جسم و جان و جگر اور آنکھ بہت نمدیدہ ہے

اس باد صبا سے پوچھے کوئی کیوں چھوڑ کے جانے والی ہے

ہنستے کھلتے اس گلشن کو ویران بنانے والی ہے

 

یادوں سے جڑے ان لمحوں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

آدغیاں کے چہرے پر مسکان نمایاں رہتی ہے

باتوں میں حلاوت شیرینی افکار میں وسعت رہتی ہے

ان گلدستوں میں رنگ وبو پنہاں ہے اسی گہوارے کا

تہذیب و تمدن دکھتا ہے ہر سمت اسی شہ پارے کا

 

اس دلکش موہنی منظر سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے

 

کیا وسیم میاں کی بات کریں وہ فن میں اپنے ماہر ہیں

جب چاہیں ہنسا دیں لوگوں کو وہ چلتے پھرتے ساحر ہیں

مستقبل کی سب زنجیریں کائنات سے جا کے ملتی ہیں

اور راز و نیاز کی سب باتیں اس در پہ ہی جاکے کھلتی ہیں

 

ان مست و مگن پروانوں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

مروہ نے بنائی ہے اپنی اوروں سے الگ پہچان بہت

کردار شگفتہ ہونے سے لوگوں میں ہے اسکی شان بہت

ویسے تو حجاب کی سادہ دلی لوگوں میں بہت مقبول رہی

پر اسکی توجہ پڑھنے پر کہتے ہیں سدا مبذول رہی

 

ان روشن چاند ستاروں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

کہتے ہیں عمل کے عزم سے ہی امید کی کرنیں روشن ہیں

وابستہ اسی کے سائے میں افکار و خیال کے مدفن ہیں

کچھ عرصہ جو اسکے ساتھ رہا وہ بھول نہ اس کو پائے گا

یادوں میں اسکی راتوں دن بس یوں ہی اشک بہائے گا

 

بیتے ہوئے اک اک لمحوں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

فرزانہ میڈم سے یاں کا ہر بچہ گھل مل جاتا ہے

خوش باش اداؤں سے انکی ہر غنچہ و گل کھل جاتا ہے

اس گلشن کے ہر گوشے میں   حق شاہ ز مان کی کاوش شامل ہے

ہر شخص کو پوری آزادی پڑھنے کی یہاں پہ حاصل ہے

 

ان علم کے بادہ خواروں سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے-

 

فرحان تو علم کی چاہت میں ہر آن سفر پر رہتا ہے

چڑیوں کی طرح ہر روز نئی شاخوں پہ بسیرا کرتا ہے

اس گلشن کے ہر غنچے سے بے لوث محبت ہے اس کو

قربان ہے اس پہ جان و دل اس درجہ محبت ہے  اس کو

 

واللہ اب اس میخانے سے دامن کو چھڑانا مشکل ہے

ماضی کی کسک یادوں کی چبھن یک لخت بھلانا مشکل ہے –

Rechercher dans OpenEdition Search

Vous allez être redirigé vers OpenEdition Search