Archives de catégorie : Nouvelles

یاسین کی صورتحال: خالی جگہیں خالی کرو

یاسین کی صورتحال

خالی جگہیں

خالی کرو

 

محمد ابراہیم پراچا

Md. Ibrahim Pracha

ہمارے چچا ماشاللہ کثیرالعیال ہیں، چچی بیچاری اکیلی جان ، گھر کے کام کاج سے عاجز آ گئیں۔ ایک خاتون ڈھونڈ کر رکھی گئیں جو کپڑے دھو دیتی ہیں، جھاڑو پونچھا کر لیتی ہیں۔ ایک دن انہوں نے کہا کہ میرا بیٹا پڑھائی میں بالکل سست ہے، ٹیوشن پڑھوانے کی میری سکت نہیں اس مورکھ کے ہاتھ سے بہت تنگ ہوں

سن کر چچی کو افسوس ہوا ہمارے چچازاد سکندر بھائی کو ان خاتون کے بیٹے کو ٹیوشن پڑھانے پر مامور کیا گیا۔ ہفتہ دس دن پہلے کی بات ہے میں چچا کے ہاں گیا تو سکندر بھائی یوں بیٹھے ہیں کہ طیش اور مایوسی کے ملے جلے تاثرات چہرے سے عیاں ہیں،

سامنے وہ بچہ یاسین ایک شرمندہ سی مسکراہٹ چہرے پر سجائے بیٹھا ہے۔ میرے استفسار پر کہنے لگے “یار بتاؤ ساتویں جماعت میں پڑھ رہا ہے چار کا پہاڑا اس کو نہیں آتا، ڈیویژن نہیں جانتا کہ کس چڑیا کا نام ہے”

مجھے ان پر ترس بھی آیا اور اس اندیشے سے کہ یہ ابھی اس کی درگت نہ بنا ڈالیں ان کو کہا آپ آرام کر لیجیے آج میں پڑھادوں گا اسے۔ پڑھانے سے پہلے دو چار باتیں ادھر ادھر کی کرتا ہوں متعلم صاحب سے تو ماشاللہ ان کو براق اور حاضر جواب پاتا، ہوں، غبابت کا نشان نہیں۔

اب تو واقعی حیرت ہوئی کہ ایسا ہوشیار لڑکا اور اسے ایسی بنیادی باتیں نہ معلوم ہو، آخر مسئلہ کیا ہے؟ تسلی کے لیے چار کا پہاڑا سنا تو چارچھکے چوبیس تک درست سنا پایا اس سے آگے خاموش۔ پھر پوچھا کہ میاں تم نے کہیں لفظ ڈویژن سنا ہے، نفی میں سر ہلا دیا۔

ریاضی کی کتاب پر نظر کرتا ہوں تو سر تا سر انگریزی میں ہے، پھر پوچھا تقسیم کا لفظ کہیں سنا ہے، ایک آدھ منٹ توقف کے بعد کہا ہاں سنا تو ہے، پوچھا تقسیم کہتے کسے ہیں؟

جواب ندارد۔ سوچا چلو حساب میں دل نہیں لگتا ہوگا اس کا کوئی اور مضمون پڑھائیں، کہا انگریزی کی کتاب نکالو آنکھیں چرا کر کہنے لگے وہ گھر چھوڑ آیا ہوں، بستہ کھولا تو کتاب موجود۔ سوچا چلو با آواز بلند انگریزی پڑھنے میں جھینپتا ہوگا اس عمر میں کسی کی انگریزی اچھی ہوتی ہے۔

اسلامیات کی کتاب نکالی اور فر فر پڑھنا شروع کی تو میں نے اطمینان کا سانس لیا۔ تھوڑی دیر تو سنتا رہا پھر جب اس نے ایک جملہ پڑھا کہ ‘ تمام فرزندانِ توحید بارگاہِ الٰہی میں سجدہ ریز ہوگئے’ تو مجھے تجسس ہوا کہ اسے اس کے معنیٰ بھی معلوم ہیں یا جیسے ہم انگریزی عبارات بنا سمجھے پڑھتے تھے ویسے ہی یہ بھی اصوات کی گردان کر رہا ہے۔ اس جملے کے معنی تو خیر کالج کے طلبا بھی صحیح سے بیان نہ کر پائیں، مگر ذرا کرید کی تو میرا شک درست ثابت ہوا، وہ کچھ بھی سمجھے بغیر پڑھتا جا رہا تھا۔

اب مجھے آہستہ آہستہ اندازہ ہونے لگا کہ مسئلہ دلچسپی ہونے یا نہ ہونے کا نہیں بلکہ نسبتاً اساسی نوعیت کا ہے۔ میں نے یوں ہی اس کی استعداد جاننے کیلیے پشتو میں عام فہم زبان میں ضرب و تقسیم کے چند سوالات پوچھے تو فر فر جواب دے دیا، معلوم ہوا کہ تقسیم و ضرب سے بظاہر نابلد یہی لڑکا گھر بار کا بندوبست کرتا ہے اور ہزاروں روپے کا جمع خرچ کرتا ہے ۔ ایک طرح سے گھر کا سربراہ ہے کیونکہ اس کے والد کو چرس کی لت ہے اور وہ مہینوں مہینوں گھر کا رخ نہیں کرتے۔ اب اسی ذمہ دار اور تیز فہم لڑکے کے سامنے اردو اور انگریزی کی نامانوس اصطلاحات کا بھنڈار لگا دیا جائے تو یہ مبہوت ہوجاتا ہے۔

 : پوچھا پاس کیسے ہو جاتے ہو تو جواب ملا : ’کلاس میں ممتحن کو بالکل کورا کاغذ لوٹانے والے دو تین طلبا تو فیل کر دیے جاتے ہیں، ادھر ادھر سے کچھ دیکھ داکھ کر لکھ لینے والوں کو اگلی جماعت میں ترقی دے دی جاتی ہے۔ مادری زبان میں تعلیم کے ہر مطالبے کو شک کی نگاہ سے دیکھنے والوں کو کوئی اندازہ ہے کہ پرائی زبانوں کو وسیلہِ تعلیم بنا کر وہ کیسے اس ملک کی اگلی نسلوں کے حق میں کانٹے بو رہے ہیں؟ انگریزی اور اردو کے دہرے تسلط سے 11 سال کشتی لڑنے کے بعد یہ ذہین بچہ بورڈ کا پرچہ ایک دو سال فیل کرے گا اور پھر سکول چھوڑ کر یا رکشہ چلانے لگے گا یا کسی مستری کے پاس شاگرد لگ جائے گا۔مجھے اس کی بلند حوصلگی اور ذہانت سے پوری امید ہے کہ ان حالات میں بھی یہ کوشش کر کے ایک دن خاصا پیسہ کما لے گا۔ مگر سوچیے کیا ہم لوگ جبراً و قصداً ترقی کے تمام دروازے ان بچوں پر بند نہیں کر رہے ؟

ایسی پڑھائی حصولِ علم میں معاون ہے کہ مزاحم ہے یہ صاف ظاہر ہے۔ اس مسئلے پر ٹھنڈے دل اور سنجیدگی سے غور کی ضرورت ہے کہ کہیں ہمارا نظامِ تعلیم ایک بہت بڑے طبقے کو پسماندہ اور محکوم رکھنے کے لیے تو استعمال نہیں ہو رہا۔ اگر ہاں تو اس کا سد باب کیسے کیا جائے۔ موجودہ صورتحال میں تو مجھے خوش آئندگی کے مراتب کے حساب سے بچوں کے تین گروہ نظر آتے ہیں:

صاحب بچے:  ’یہ بچے اور کچھ سیکھیں نہ سیکھیں انگریزی ضرور سیکھ لیں گے اور اسی کے بل پر راج کریں گے‘۔

کسی کے بچے : ’یہ بچے اردو سیکھ لیں گے اور جس انگریزی کے سکھانے کے لیے ان کے ماں باپ بیش قیمت کتابیں خریدتے ہیں اور فیسیں بھرنے کے لیے جانکاہ محنتیں کرتے ہیں وہ بہرالحال ان کو نہ آئے گی۔ تاہم ان کا مستقبل بھی مخدوش نہیں ہے، اردو اور ناقص انگریزی کی شراکت کا جادو بھی اس ملک میں سر چڑھ کر بولا ہے‘۔

دشمن کے بچے : ’یہ بچے ملک کے طول و عرض میں پائے جاتے ہیں۔ مشہور ملی گیت کی روشنی میں حکومت کو انہیں پڑھانا تو ہے، تاہم کیسے پڑھانا ہے ، کیوں پڑھانا ہے ، کیا پڑھانا کس زبان میں پڑھانا ہے، کس جماعت تک پڑھانا ہے ان معاملات میں حکومت کو کوئی دلچسپی نہیں۔ ان کی فطری ذہانت تعلیمی میدان ان کے کسی کام کی نہیں اور ان کی پڑھائی ان کی تعلیم میں مکمل طور پر مخل ہے‘۔

شغال

شغال

 

 

شاہ زماں حق

 

 

دلّی کی شدید گرمی میں دوپہر تین بجے میں ایک بس سٹاپ پر کھڑا ۵۰۷ نمبر بس کا انتظار کر رہا تھا۔ بُشیٹ پسینے سے شرابور تھی ۔ بس آنے میں  ابھی کافی وقت تھا اس لیے میں نے ریڑھی والے سے ایک مالبورو لے کر سگریٹ کا کَش لگانے لگا۔ اچانک میرے سامنے میرے ہی فرنچ ادارے کا ایک لڑکا نمودار ہوا۔ اُس کا نام تو دیباشیش  تھا لیکن سبھی اُسے دیو کے نام سے پکارتے تھے۔ آتے ہی اُس نے پوچھا ، ’’فرانس جاؤگے ؟‘‘

میں تھوڑا حیران ہوا۔ دیو سے میری دوستی تھی نہ  شناسائی ۔ وہ مجھے فرانس لے جانے کی پیشکش کیوں کر رہا ہے ؟ ’’کیا مطلب؟‘‘ ، میں نے ایک لمبا کش کھینچ کر سنجیدگی سے پوچھا ۔ ’’فرانس جانے کے لیے ایک وظیفہ ہے، ہم دونوں ساتھ چل سکتے ہیں، تُو مجھے بتا دے، میں تیرا نام بھر دوں گا‘‘۔

ہاں ٹھیک ہے‘‘،  میں نے  چہرے پر خفیف سی مصنوعی مسکراہٹ لاکر جواب دیا۔ مُجھے معلوم تھا کہ  اس’’

طرح کے سیکڑوں وظیفے ہیں لیکن اُن کا ملنا ناممکن ہے۔

 

میرا اندازہ غلط ثابت ہوا۔ دو مہینے بعد مجھے پیجر سے دیو کا پیغام موصول ہوا کہ وظیفہ مل گیا ہے، اب  ہوائی جہاز کی ٹکٹ کی رقم کا انتظام کرنا میری اصل ذمّہ داری ہے۔

ایک مہینے بعد دِلّی سے ایک فلائٹ نے ہمیں فرانس کے ایک جنوب شہر میں اُتار دیا۔ وہاں سے  ہم نے بَس کا سفر کیا اور ایک چھوٹے سے شہر میں آگئے جہاں کی ایک بڑی جامعہ میں ہمارا داخلہ ہوا تھا ۔

فرانس پہنچ کر مجھے معلُوم ہوا کہ مجھے دیو نے  وظیفے کی پیشکش کیوں تھی۔ بقول اُس کے  میری دسترس فرانسیسی  بولنے میں اُس سے کہیں زیادہ بہتر تھی تو ہر جگہ جہاں فرانسیسی بولنے کی ضرورت پڑتی وہ مجھے آگے کر دیتا۔

دیو کے مزاج سے میں واقف نہیں تھا۔ دِلّی میں اُس سے رسماً ہائے ہیلو کے علاوہ کبھی طویل بات چیت نہیں ہوئی تھی۔ مجھے اتنا معلوم تھا کہ وہ فوج  میں تین سال بھرتی رہا اور  کسی وجہ سے وہ فوج کی نوکری چھوڑکر بینک میں کام کرنے لگا ۔ بینک کی بھی مُلازمت نہ جانے اُسے راس کیوں نہ آئی اور پھر وہ فرانس جانے کے لیے بے قابو ہو گیا ۔ بات چیت میں وہ مسکراتا اور سوچتا زیادہ تھا۔ اُس کے منھ سے فقرے کم ہی نکلتے تھے اور اُس کی بڑی بڑی کنچے نُما آنکھیں لِشکتی اور کسی شئے کو گھُورنے میں مشغول رہتیں۔  سَر پر بال ندارد  ۔  چہرے پر ایک غیر معمولی  اور پراسرار دمک  تھی جس کی وجہ سے فرانسیسی  اُس کی طرف کھنچے چلے آتے تھے۔

ایک دن اُس نے مجھ سے کہا کہ فرانس کی زندگی کچھ زیادہ ہی پُرسُکُون ہے۔ یہاں کوئی پھڈّے وغیرہ نہیں ہوتے۔ دِلّی میں تو پل پل میں لوگ خفا ہو جاتے  ہیں اور ایک دوسروں پر بلا وجہ گالیوں کی بوچھار کرنے سے باز نہیں آتے۔ یہاں کی پُر امن زندگی سے وہ اُکتا رہا تھا۔

رفتہ رفتہ اُس کی سوچ میں اہر من کا  غلبہ ہونے لگا۔ وہ راتوں میں اُن مے خانوں میں جاتا جہاں سماج کا ایک غریب و وسطی  طبقہ شراب نوشی کے درمیان ژاژ خائی میں مبتلا ہوکر آپس میں تکرار کرتے۔ اُسے اِس تکرار کے نظارے سے تسکین ملتی۔ اُس نے مجھ سے کہا کہ اگر وہ  فرانسیسی کے بجائے عربی سیکھتا تو زیادہ فائدے میں رہتا۔  عربی بولنے والے جلا وطنی مزدوروں میں عروج پر جانے کی تَمَنّا ہے، وہ محنت کش ہیں اور رات میں شراب کے سیراب میں اپنی کمزوری بیان کرتے ہیں۔ اُن کا اِستحصال اپنی مفاد کے لیے آسانی سے ہو سکتا تھا۔

دھیرے دھیرے اُس کے ساتھ رہ کر مجھے یہ معلوم ہوا کہ وہ لومڑی سے بھی زیادہ شاطر تھا۔ وہ اپنی ساری چالاکی دوسروں کو بیوقوف بنانے  میں استعمال کرتا۔  دیو کی کشش فرنچ لوگوں کے تئیں اُس کا بیرونی نژاد تھا ۔ لوگ اُس کی طرف ایک  بیرونی ثقافت، زبان اور  ہم عصر خیالات کو سُننے کے لیے بے تاب رہتے ۔ دیو نے  اپنی اِس کشش کا ناجائز فائدہ اٹھانا شروع کر دیا۔ اِس بات کو اُس کے بہت سارے رفیقوں نے بھانپ لیا – دیو کی باتیں کوّے کے ٹھونگے کے طرح چُبھتیں۔  انہوں نے سوچا کہ دیو سے کنارہ کشی میں اُن کی بھلائی ہے ورنہ اُن کے سارے اثاثے ہضم کر لینے میں وہ گریز نہ کریگا ۔

پھر بھی اللہ کی  نرالی دنیا میں معصوم لوگوں کی کمی کہاں ہے ۔ کئی لوگ اُس کے جھانسے میں آئے۔ دیو کی یہ کوشش رہتی کہ زیادہ  سے زیادہ اُن کے مال یا اُن کی ذرہ  ذرہ سی شئے کو بہت ہی شاطرانہ انداز میں ہتھیا لے۔ جب اُس کا مقصد پورا ہو جاتا تب ایک دلکش شیطانی مسکراہٹ اُس کے لبوں پر نمودار ہوتی  گویا اُس کے دماغ سے ڈوپامین خارج ہو رہا ہو۔

ایک دن اُس کی دوستی ایک پاکستانی نژاد شخص رُستَم سے ہوئی جو ایک ریستوران میں برتن دھوتا تھا۔  رُستم کو شراب کا بہت شوق تھا۔ دیو نے اُسے شراب اور بیئر کی دعوت کے عوض میں یہ مطالبہ کیا کہ وہ اپنے مالک کے ریستوران کے رسوئی خانے سے روز کچھ نا کچھ کھانے پینے کی اشیا چوری کر کے اُسے دیتا رہے۔ ایسے میں اُس کے مالک کواُس پر شک بھی نہ ہوگا۔   رُستم روز  عمدہ فرانسیسی پنیر، انڈے ، مَکھّن وغیرہ کم مقدار میں چوری کرتا ۔ دیو اُسے شراب پلا پلا کر پلا پلا کر ریشۂ خطمی کر دیتا تھا ۔ یہ سلسلہ  کچھ کچھ ہفتے چلا ہی ہوگا کہ ریستوران کے مالک کو شک ہو گیا اور اُس نے رُستم کو نوکری سے کافی ذلیل کر کے باہر نکال دیا ۔ دیو کو اِس بات کا ذرا سا بھی ملال نہ ہوا۔ اُلٹا اُس نے  رُستم کی بیوقوفی کا مذاق اُڑایا کہ اُس نے چوری کرتے وقت احتیاط کیوں نہیں برتی۔

دیو کو اب نئے مرغے کی تلاش تھی۔ اُس کی  آرزو تھی کہ  شہر کا ہر فرد اُسے کچھ نہ کچھ دیتا رہے۔

ایک دن میری ملاقات ژوئیل سے ہوئی ۔ ژوئیل ایک فرانسیسی  طالب علم تھا جو ہمارے اور دیو کا ہم جماعت تھا۔ ژوئیل شوقیہ شہر کی گلیوں میں وائلن بجاتا تھا لیکن وہ اتنا امیر تھا کہ سر سے لے کر پاؤں تک اُس کی ہر شئے سے دولت نمیاں ہوتی تھی۔ کچھ دنوں سے وہ مجھے پژمردہ نظر آنے لگا۔ میں نے غور کیا تھا کہ ژوئیل کی دوستی دیو سے کافی لمبے عرصے تک رہی تھی اور اچانک وہ دونوں ایک ساتھ نہیں دِکھ رہے تھے۔ میرے دریافت کرنے پر ژوئیل نے بتایا کہ دیو ایک شغال ہے۔ میری آنکھیں پھٹی  کی پھٹی رہ گئیں۔  یہ بات سبھی کو معلوم تھی کی دیو اور  میں ایک زمانے میں ایک ہی رہائش گاہ میں رہتے تھے۔ ژوئیل  کے اس بات سے میرے کردار  پر بھی ایک چھینٹا پڑا۔

خیر جب میں نے ژوئیل سے پوچھا کہ آخر دیو نے ایسا کیا کیا تب  اُس نے پوری کہانی تفصیل سے بتائی ۔ دیو نے شروع شروع میں خوب تحفے تحائف سے ژوئیل کو  اپنی طرف راغب کیاتھا۔ دراصل ژوئیل کا  ایک  شاندار فلیٹ تھا جہاں وہ اکیلا رہتا تھا۔ فلیٹ کا کرایہ  اُس کا باپ دیتا تھا ۔ دیو نے سوچا کہ کیوں نہ وہ دوستی کے بہانے اُس کے یہاں  مفت میں رہنا شروع کر دے۔  ژوئیل اُس کی  چِکنی  چُپڑی باتوں میں آگیا۔ دیو کو  رہنے کی اجازت مل گئی اور یہ بات طے پائی کہ جب تک اُس کو نئی نوکری نہیں ملتی وہ کرایہ نہیں دیگا لیکن خانہ داری میں اُس کا برابر کا حِصّہ رہے گا۔

دیو ہر دو چار روز پر ایک لڑکے کو کھانے پر لے کرآتا اور اُس سے کھانے کی رقم جو ریستوران کی آدھی ہوتی وہ پہلے ایڈوانس میں لے لیتا ۔ یہ بات  ژوئیل کو  معلوم نہیں تھی  جس کا انکشاف بہت بعد میں ہوا۔ بقول ژوئیل دیو کے دوست  یہ سمجھتے تھے کہ اُسے  یہ بات  معلوم ہے اور اس رقم کو وہ دیو کے ساتھ بانٹ لیتا ہے۔    ژوئیل کا یہ بھی معمول تھا کہ ہر ہفتے  جمعے کی رات   وہ اپنے والدین کے گھر دو روز رہنے کے لیے کوچ کر جاتا تھا۔ دیو نے جمعے اور ہفتے کی رات کرایہ   پر لگانا شروع  کر دی۔ وہ ریل سے ملحق بس سٹیشن پر   چلا جاتا اور وہاں اپنے نئے گاہک تلاش کرتا۔  ژوئیل کے ایک فرنچ پڑوس  نے اُس سے شکایت  کی کہ  اُس کا فلیٹ کوئی ہوٹل نہیں ہے اور  تقریباً ہر ہفتے  نئے لوگوں کو اپنے یہاں قیام کرانا غیر قانونی ہے۔ ژوئیل  نے اِن ساری باتوں کو لے کر خوب چیخم چاخ مچائی اور دیو پر کافی برسا۔  دیو اپنی دفاع میں کچھ نہ کہہ سکا ۔ ژوئیل نے اُسے اُسی دن اپنے  فلیٹ سے باہر نکال دیا۔

دیو  پہلے ہی سے بھانپ چُکا تھا کہ ژوئیل کے ہاں کبھی بھی اُس کی گَردَن پر تلوار گر سکتی ہے۔ اُس نے ایک ماہ قبل سے ہی ایک منگولین نژاد خاتون خُلان پر نظریں جما رکھی تھیں ۔ خُلان کی عمر قریباً دیو کے برابر ہوگی ۔ اُس نے خُلان سے اپنی محبت کا اظہار  اپنے ہم وطن بنگلہ شاعر بہاری لال چکرابرتی کی پیار بھری نظموں سے کیا ۔ پھر اُسے شاہ رخ خان کی فلم دیوداس کی پائیریٹید کاپی اپنے کمپیوٹر پر دکھلائی۔ خُلان دیو کے جھانسے میں مُکَمّل طرح سے پھنس چُکی تھی۔ جب دیو کو ژوئیل نے اپنے فلیٹ سے باہر نکالا تب وہ  سیدھا خُلان  کے ہی  فلیٹ پر آ دھمکا تھا۔

اتفاقاً ایک دن میری ملاقات صبح کے وقت خُلان سے شہر کے ایک پارک میں ہو گئی۔ وہ مجھے دیکھ کر ٹھٹھک گئی۔ ژوئیل کی طرح اُسے بھی معلوم تھا کہ میں دیو کا بہت اچھا ساتھی رہ چُکا ہوں۔ اُس کا مُتوّحش چہرہ دیکھ کر میں نے  پوچھا کہ کیا وہ خیریت سے ہے۔

کچھ لمحے کے بعد جب میں نے اُسے بتایا کہ دیو سے میرا تعلق ایک سال پہلے ختم ہو چکا ہے تب اُس نے  بڑی افسردگی سے اپنی داستان  سُنائی۔ خُلان نے کہا کہ دیو ظالم، ناہنجار، سنگ دل، غنیم اور فِتنہ پرداز ہے۔ یہ بات اُس نے ایک ہی سانس میں کہہ ڈالی۔

دیو نے تو میرا سب کچھ لوٹ لیا۔ ہمارے تو ناک نقشے میں ایسا عیب ہے کہ سوائے منگولیہ کے  کہیں کا’’

بھی مرد  ہمیں دیکھنے کا شوق نہیں رکھتا ۔ دیو کی آنکھوں میں میں نے اپنے لیے تڑپ دیکھی، نا جانے وہ مجھ پر کیوں لَٹّو ہو گیا، پر مجھے کیا معلوم تھا کہ وہ ایسا درندہ نکلے گا کہ مجھے پُرانے پیتابوں کی مانند پھینک دے گا ۔ دیو کا میں نے پورا خرچہ چار مہینے تک اُٹھایا ، اپنے گھر میں بوڑھی ماں کو ماہانہ خرچہ نہ بھیج سکی۔ لیکن جب میں نے اُسے اپنے حمل کی خبر  سُنائی تو وہ اگلے روز سے رفو چکرہو چُکا تھا ۔اُس نے مجھے آدھی ماں بنا کر چھوڑ دیا۔ میرا بس چلے تو میں اپنے کھوئے ہوئے بچے کا قصاص لوں‘‘۔

خُلان  کی باتیں سُن کر میرا چہرہ فق ہو گیا۔ میرے پاس کوئی معقول الفاظ نہیں تھے کہ میں اُسے دلاسہ دے سکُوں۔  پھر بھی میں نے اظہار تاسف کیا اور کہا کہ اگر کسی چیز کی مدد ہو تو میں حاضر ہوں۔

اس واقعے کے بعد دیو میرے راڈار سے بالکل غائب ہو گیا۔ مجھے کہیں سے بھی اُس کی اصلاً خبر نہیں ملی۔ ایسے لوگوں کی خاصیت یہ بھی ہوتی ہے کہ یہ اپنی چھاپ انٹرنیٹ پر بھی نہیں چھوڑتے۔ دیو کی زندگی کس طرح آگے بڑھی یہ اب معما ہے۔  نہ جانے اُس کے ذہن میں پل پل کون سے وسوسے جنم لے رہے ہیں اور کون اِن کا شکار ہو رہا ہے لیکن میں اُس کا ممنون ہوں کیوں کہ اُس نے اپنی فریب بازی سے مجھے محفوظ رکھا ۔

 

@Tous droits réservés

فائو جی کیمرا

فائو جی کیمرا

 

 

Source : Steven Senne/AP/SIPA

شاہ زماں حق

آج صبح جب میں کافی پینے کے لیے اپنے پڑوس کے قہوے خانے میں گیا تو ساتھ میں ایک فرانسیسی مزدور پوشاک شخص بھی کافی پی رہا تھا۔ قہوے خانے کا مالک جو الجزائر نژاد کا تھا بہت خوش نظر آرہا تھا۔ وہ دھیمی آواز میں اپنی مادری زبان امازیغی میں کچھ گُنگُنا رہا تھا ۔ جب میں نے اُس سے اُس کے اچھے موڈ کی وجہ دریافت کی تب اُس نے فخر یہ انداز میں ہمیں دو سی سی ٹی وی کی طرف جو بیچ چوراہے میں لگے تھے اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ”یہ دو دن پہلے لگے ہیں اور یہ کوئی عام کیمرا نہیں ہے بلکہ یہ آپکی پوری شناخت کر لیتا ہے ۔میں کیا بتاؤں یہ آپکی پوری ہسٹری کھنگال دیگا ۔ مزے کی بات یہ بھی ہے کہ اس کیمرے کے ساتھ فائو جی کا اینٹینا بلکل ملحق لگایا گیا ہے۔ کیمرے میں انٹرنٹ کا سِگنل ہمیشہ  چالو رہیگا‘‘۔

مزدور پوشاک شخص نے کہا کہ ”اچھا لیکن یہ مجھے پسند نہیں ہے کہ سرکار کو ہمارے ہر لمحے کی خبر خواہ مخواہ ہوتی رہے۔ یہ تو وہ ناول ہوگیا جو جارج اورویل نے لکھا تھا، کیا نام تھا اُس کا؟ “

میں نے کہا ”نائین ٹین ایٹی فور“۔

قہوے خانے کا مالک بھنّا گیا ۔ اُس نے کہا ”تمہیں کیا معلوم کہ یہاں کتنے خطرناک درندے اور مجرم رات دن چَکّر لگاتے رہتے ہیں۔ جب سے یہ کیمرا اس محلّے کی نگرانی کر رہا ہے میں بہت محفوظ محسوس کر رہا ہوں ۔ اب تو میرے ہاں جب بھی کوئی گاہک آتا ہے جس کے بدمعاش ہونے کا مجھے ذرا سا بھی شُبہ ہوتا ہے تو اس سے قبل کے وہ مجھے آرڈر دے میں اُسے اُس کیمرے کی طرف اشارہ کر دیتا ہوں‘‘ ۔

مزدور پھر بھی متفق نہ ہوا۔ اُس نے کہا یہ تو وہی بات ہو گئی جو کافکا نے لکھا تھا کہ کس طرح عام معصوم لوگوں کو سرکار مجرم بنا کر حراست میں لے لیتی ہے۔ ”کیا نام تھا اُس کتاب کا ؟ “

میں نے کہا ”د ٹرائل“۔

مزدور چہک اُٹھا۔ اُس نے کہا کہ شاید اُس پر جاپانی ناول “جب تک کافی گرم ہے“ کا اثر ہے کیونکہ کافی کی ہر گھونٹ کی چُسکی کے ساتھ وہ ماضی کے غوطے لگانے لگتا ہے۔

میں نے اُس سے پوچھا، ” کیا آپکو ادب میں دلچسپی ہے ؟ “۔ اُس نے کہا، ’’بس پڑھتا رہتا ہوں لیکن میں نے ساتویں جماعت میں درس گاہ چھوڑدی تھی کیونکہ پڑھنے سے اُکتا گیا تھا‘‘ ۔ پھر اُس نے کہا ”شکر ہے میں نے سکول جانا چھوڑ دیا ورنہ یہ سرکاری نصاب مجھے کچھ اور بنا دیتے“ ۔

انگریزی کی دھاک

Publié sur Pratalipi  

Publié sur Mukaalma.com

Le 02/06/2022

انگریزی کی دھاک

۔ ڈاکٹر شاہ زماں حق

انگریزی کوشایداگرایک لسانی وائرس کا نام دیا جائے تو غلط نہ ہوگا ۔  اِس وائرس کا شکار پندرہ سالہ لڑکا راکیش ہوا تھا جوکہ ریاست بہار کے دارالحکومت پٹنہ کے ایک نجی انگریزی میڈیم سکول میں نویں درجے کا طالب علم تھا ۔ ویسے تو راکیش ایک متوسط طبقے سے تعلق رکھتا تھا مگر باوجود اس کے، کوئی بھی گھر کا فرد انگریزی زبان نہیں بولتا تھا۔ انگریزی زبان سےبیگانگی کے باوجود انگریزی کا دخل گھر میں ٹی وی اشتہاروں اور مقابلے کے امتحانوں کے رسائل کے ذریعے ہو چُکا تھا ۔

راکیش کے والدین کی مادری زبان بھوج پوری تھی اور راکیش کو بھی بھوج پوری میں اچھی مہارت تھی ۔ بہار کے شُمال میں گوپال گنج نامی چھوٹے سے شہر سے راکیش کے والد طالب علمی کے زمانے یعنی  ستّر کی دہائی میں پٹنہ آئےاور  کچھ سالوں کی کڑی محنت کے بعد وہ بہار پولیس میں بھرتی ہو گئے ۔ اُن کی پوسٹ زندگی بھر ایک تھانے میں سب انسپکٹر کی رہی اور وہ زیادہ ترقّی نہیں کر سکے ۔ اُن کو یہی ملال رہا کہ اگر انگریزی آتی ہوتی تو محکمے میں بہتر ترقی ہوسکتی  تھی ۔ اُنہوں نے شادی اپنے گاؤں میں کی اور کچھ عرصے کے بعد اپنے دو چھوٹے بھائیوں کو بھی پٹنہ بلا لیا ۔ راکیش کے والد اپنے بھائیوں کو انگریزی پر زیادہ زور دینے کے لیے کہتے تھے ۔ اُن دونوں کا پیشہ تو کچھ خاص نہیں تھا لیکن انگریزی پر اچھی گر فت ہونے کی وجہ سے خاندان میں دونوں کی عزّت ہونے لگی ۔ دونوں کی شادی کے لیے بھی یہ نسخہ استعمال کیا گیا کہ لڑکے فر فر انگریزی بولتے ہیں ۔

اس فرنگی زبان سے لوگوں کو پٹنہ شہر میں یا بہار کےتمام حصّوں میں نہ جانے کیسی کیسی امیدیں بندھ جاتیں ۔ انگریزی بولنے والا کامیابی کی سیڑھی تیزی سے چڑھے گا ۔ ہمیشہ ایک رعب رہے گا ۔ سرکاری نوکری تو بچّوں کا کھیل ہے، نجی کمپنیاں ہاتھوں ہاتھ استقبال کریں گی ۔ انگریزی کوئی زبان نہ ہوئی بلکہ ایک شاہی پوشاک ہو گئی ۔ اِسی پوشاک کو پہننے کی اور اپنی اولادوں کو پہنانے کی ایک خواہش چلی ہوئی تھی ۔

راکیش کے والد یوں تو پٹنہ میں نوکری کے دوران ہی انگریزی کی اہمیت سمجھ گئے تھے لیکن پٹنہ آنے سے پہلے جب وہ اپنے گاؤں میں رہتے تھے تو اُنہیں ایک واقعہ یاد تھا ۔ اُن کے گاؤں میں دوگروہوں کے درمیان جھڑپ ہو گئی ۔ پولیس بھی پہنچی لیکن معاملہ سُلجھ نہیں رہا تھا ۔ اچانک ایک شخص نمودار ہوا۔ اُس نے انگریزی میں زور سے سبھی کو ڈانٹ پِلائی اور کہا ’کیپ یور ماؤتھ شَٹ‘

یہ سُنتے ہی سبھی کو سانپ سونگھ گیا ۔ یہ فقرہ کسی کو سمجھ میں تو آیا نہیں لیکن انگریزی کے رعب کا اثر فوری طور پر دکھائی دینے لگا ۔ وہاں پر کھڑے پولیس والوں نے اُس شخص کو زور دار سیلوٹ کیا اور اُنہیں ایسا لگا کہ وہ نوجوان اُن کا افسر ہو ۔

’وھاٹس دا میٹر ؟ ‘ (کیا ماجرا ہے ؟) – نوجوان شخص نے اپنی آواز میں مزید کڑک  پیدا کر تے ہو ئے کہا۔

’نو سَر، نہیں سَر، یَس سَر،  پِلیج سَر‘ ۔ ایک پولیس والے نے گھبراتے ہوئے ایک دو لفظ انگریزی میں بَڑبَڑانے کی کوشش کی ۔ اُس نے اپنے ماتحت کو کُرسی منگوانے کا اشارہ کیا ۔ کُرسی پر وہ شخص بیٹھا۔ سبھی اُس کی باتوں کو سُن رہے تھے، وہ بیٹھتے ہی بھوج پوری میں بات کرنے لگا تھا لیکن پھٹکار انگریزی میں لگاتا ۔

راکیش کے والد کو معلوم تھا کہ وہ شخص دس سال پہلے دہلی پڑھائی کرنے گیا تھا ۔ دہلی یونیورسٹی سے  فلسفہ میں ماسٹرز کرنے کے بعد وہ بیروزگار تھا۔ اپنا خرچا چلانے کے لیے دہلی کے اوکھلا گاؤں کے مُحلّے میں وہ انگریزی ٹیوشن پڑھاتا تھا۔ گھر میں اُس کے یہاں بدحالی تھی، پیسے وہ باقاعدگی سے بھیجتا نہیں تھا۔ لیکن آج اُس کا رعب دیکھ کر راکیش کے والد کو یقین ہو گیا کہ انگریزی سے معاشرے میں عزت ضرور مل سکتی ہے۔

راکیش کو انگریزی کی اہمیت کی گھُٹّی اُس کے والد نے جم کر پِلائی ۔ اُس کا داخلہ پٹنہ کے ایک نامور انگریزی میڈیم سکول کرائسٹ چرچ میں کروا  دیا گیا۔ وہاں ہندی ٹیچر کے علاوہ سارے اساتذہ صرف انگریزی میں طلبا سے گفتگو کرتے۔

راکیش کا قد لمبا، سانولا رنگ، موٹا چشمہ اور اُتنے ہی موٹے ہونٹ اُس کے منحنی سے جسم پر خوب نُمایاں ہوتے تھے۔ راکیش کو اپنے معمولی نقوش کا احساس تھا ۔ اپنی طرف ساتھیوں کو مائل کرنے کے لیے اس نے خود پر ہنس کر دوسروں کو ہنسانے کا کام شروع کر دیا۔ مزاجاً  راکیش بہت بڑا  گپّی تھا۔ اُس کا دل گپ سے کبھی نہ بھرتا ۔ گپ جیسے اُس کی زندگی کے  لیے  دوسری آکسیجن تھی ۔ وہ سکول تو  گپ  لگانے  کے لیے ہی  آتا تھا ۔

اس کے چند ہم جماعتوں میں اُس کی دوستی عرفان سے پکی ہو گئی جو اُسی کے محلّے میں دو فرلانگ کی دوری پر رہتا تھا۔ عرفان کو بھی انگریزی سے کافی لگاؤ تھا لیکن وہ راکیش کی طرح انگریزی کے نشے میں غرق نہ رہتا تھا ۔

راکیش کی کلاس میں یوں تو انگریزی پر مہارت حاصل کرنے والا ایک سے بڑھ کر ایک طُرّم خان تھے  لیکن ایک لڑکا جس کو وہ اپناگُرُو تسلیم کر چُکا تھا وہ تھا  راجیش ۔ بھاری بھرکم ضخیم بدن کا مالک، گول چہرہ، نیم سانولا رنگ، موٹے موٹے چشمے اور گھنگھریالے بال والا یہ چھ فُٹ کا ساتھی کلاس میں سب سے پیچھے والی سیٹ پر بیٹھتا تھا۔ راجیش کی اپنی ایک مُتوازی کلاس چلتی تھی جس کا موضوع شیکسپیئر کے بدنام کردار ہوا کرتے تھے۔ راجیش اُن کے بارے میں بہت پُراسرار اور دھیمی آواز میں انگریزی میں لکچر دیتا ۔ بظاہر اُس کا اپنا گروہ تھا اور اُس کے سُننے والے اُسی کے مدّاح تھے۔ درسگاہ کے کسی بھی استاد کی ہمّت نہ ہوتی کہ راجیش کو کلاس کے پیچھے بُدبُداتے دیکھ کر ڈانٹ پلائے۔ راجیش نے اپنے انگریزی کے رعب سے ان کو متاثر کر رکھا تھا۔ وہ انگریزی کے اُن الفاظ کا استعمال کرتا جس سے اُس کے اساتذہ بھی نابلد تھے ۔ راکیش، راجیش اور اساتذہ کے درمیان تکرار کو دیکھ کر خوب لطف اٹھاتا ۔ شروع شروع میں تو راکیش راجیش کے لہجے کی نقّالی کرتا لیکن انگریزی میں رفتہ رفتہ عبور حاصل کرنے کے بعد اُس نے انگریزی میں کلام کرنے کا اپنا الگ ہی انداز اختیار کر لیا۔ ہاتھوں کو اوپر کی طرف لہراتا، لمبی مُسکان کھینچتا اور اوپری جسم میں خمیدگی پیدا کرتا۔

راکیش نے غور کیا کہ سکول کے بعد یا چھُٹیوں کے دوران اُس کے انگریزی بولنے کا دائرہ تقریباً ختم ہو چکا تھا ۔ لے دے کر عرفان تھا یا مُحلّے میں ایک دو اور جماعت کے ساتھی جِن کے ساتھ وہ گفتگو کرتا ۔ لیکن اِس گفتگومیں طمانیت نہ تھی ۔  باتیں چندرسمی انگریزی جملوں یا چند انگریزی الفاظ  سے  آگے نہ بڑھ پاتیں ۔ یہ دیکھ کر اُسے ایک الگ صدمے کا احساس ہوا ۔ اب وہ انگریزی میں کہاں گفتگو کرے؟

نَوّے کی دہائی میں پٹنہ کے پوش علاقوں میں اچانک سپوکن انگریزی کوچنگ اور کمپیوٹر پروگرام کے کورسز کی بھرمار شروع ہوگئی ۔ راکیش نے ایک دو اشتہار کے بورڈ دیکھے تو اُس کے ذہن  میں یہ بات آئی کہ کیوں نہ ان جگہوں پر اپنی انگریزی آزمائی جائے۔ راکیش نے اُن اداروں میں جانا شروع کیا اور ریسپشن پر ہی ایسی انگریزی ٹھونکتا کہ سبھی سُننے والوں کو کچھ سمجھ میں نہ آتا۔ راکیش ایک ایک کا منہ تکتا کہ اُس نے فارسی تو نہیں بولی ہے۔

راکیش ایک سیدھا سا سوال جڑتا (وھاٹ اِز دا موڈیوُل آف یور کورس ؟) ۔ راکیش کے انگریزی فقرے   کوچنگ کے ڈائریکٹرں کے  پلےّ   نہ پڑتے ۔ وہ اپنا سر کھجاتے اور بہانہ بناتے ہوئے اپنے چیمبر سے باہر نکل جاتے۔ ریسپشن کی کم عمر خواتین داخل ہوتیں اور راکیش کے ہاتھوں کو پکڑ لیتیں اور کہتیں “کیسے ہیں سَر، کچھ چائے ٹھنڈا لیں گے کیا ؟”  ۔ راکیش نے جب اپنی آؤ بھگت دیکھی تو بغلیں بجانے لگتا۔

دھیرے دھیرے پورے شہر میں راکیش کی رعب دار انگریزی کا ڈنکا بجنے لگا ۔ کوچنگ والوں پر ہیبت طاری ہو گئی۔ راکیش کو دیکھتے ہی کوچنگ کا مالک اپنے خادموں کو بولتا “ارے شَٹَر گِرا شَٹَر” ۔ انہوں نے کوچنگ سنٹر کے پھاٹک پر ایک نئے ملازم کو رکھا جس کا محض یہ کام تھا کہ وہ راکیش کی آمد پر سبھی کو آگاہ کرے۔

راکیش پٹنہ کی سڑکوں پر لارڈ میکالے کے لسانی منصوبے کی ایک جیتی جاگتی تصویر تھا۔ راکیش کے خون اور گوشت میں ہندوستانی ثقافت کُوٹ کُوٹ کر بھری تھی لیکن انگریزی زبان سے وہ ایک انگلِش مین یا ملکہ وِکٹوریا کا تابع لگتا تھا۔ زبانِ انگلستان کےعشق کا خمار ایساچڑھا ہوا تھا کہ دیوانگی کے عالم میں انگریزی بولنے کے لیے بے چین رہتا ۔

راکیش جب ایک کوچنگ سنٹر سے نکلتا تو جارحانہ انداز میں دوسرے کا رُخ کرتا ۔

راکیش کو جس شام انگریزی بولنے کا موقع نہ ملتا تو وہ دُرشت آواز میں راہ چلتے لوگوں پر طنز کے تیر  پھینکتا۔ ایک بار تو اُس نے رات کی تاریکی کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے ایک کافی بھاری بھرکم شخص کو پیچھے سے کرخت آواز میں کہا : “ابے او جٹ دھاری، کدھر جا رہا ہے بے ؟ ” اتنا سُننا تھا کہ اُس شخص کی چال لڑکھڑا گئی ۔ راکیش گھوڑے کی مانند  ہِنہِنا کر ہنسا ۔   اپنے  سینے کو ٹھونک کر بولا کہ” یہ ہمَّت انگریجی کی دین ہے”۔

راکیش کے حجرے میں انگریزی کتابیں، انگریزی رسائل کا ایک پلندہ پڑا رہتا۔ شاید وہ کباڑ کی دکان سے ان رَدِّیوں کو اُٹھا کر لے آتا کیونکہ یہ انگریزی میں تھے۔ جب کوئی دوست اُس کے گھر آتا تو وہ بہت خوش ہو کر اُسے اپنے کمرے میں لے جاتا اور ایک ایک رسالہ کھول کھول کر اُس کو دکھاتا اور  تفصیل  سے بتاتا کہ فلاں آئی اے ایس کو انگریزی کی وجہ سے کس طرح کامیابی ملی۔

رفتہ رفتہ راکیش کے کوچنگ سنٹروں کے  دورے میں کمی آتی گئی  کیونکہ شہر میں  کوئی ایسا کوچنگ سنٹر نہیں بچا تھا جہاں راکیش نے اپنے انگریزی کے جوہر نہ دکھائے ہوں ۔

اب راکیش کی عمر پچاسویں  برس کی طرف گامزن ہے ۔ وہ تجرّد کی زندگی گزار رہا ہے۔ گھر میں بُوڑھی ماں متمنّی ہے کہ گھر میں  بہو آئے مگر راکیش نے انگریزی کو ہی  عروسی درجہ دے دیا ہے۔

ختم شُد

Imli ka per (L’arbre de tamarin)

اِملی کا پیڑ

۔ شاہ زماں حق

بات اُن دِنوں کی ہے جب میری عمر تقریباً بارہ یا تیرہ سال تھی  ۔ گرمیوں کی چھُٹّیاں منانے میں اکثر ننھیال جایا کرتا تھا۔ مجھے نہ جانے بچپن سے ننھیال سے ایسا کیا لگاوٴ تھا کہ من کرتا تھا کہ وہیں اپنا وقت گزاروں۔ اپنے شہر کی چکا چوند یا آواز کی آلودگی سے ایسا محسوس ہوتا تھا جیسےمیں  کسی قفس میں رہ رہا ہوں۔ محض دس کلو میٹر  کی  دوری پر میرا ننھیال ہی  ایک ایسا مُقَدّس مقام تھا جہاں کی مَخملی زمین، شَفّاف ہوا اور خاموش سماں ذہن  میں آتے ہی  قلبی اِطمینان مُیّسر ہوتا تھا۔

نہ کوئی ہوم وَرک کی ٹینشن ، نہ کوئی  کام، بس کھاتے پیتے رہو اور خود میں  مَست رہو۔ ہر نظر جو مجھ پر پڑتی، شَفقَت اور مُسکراہٹ  لیے ہوتی ۔ ہر فردجیسے مجھے دیکھ کر خوش ہے   اور چاہتاہے کہ مُجھے اور خوش کر دے۔ کسی نے آج تک یہ نہ کہا کہ جاکر بَنیے کہ  ہاں سے فلاں چیز خرید لاوٴ۔ ہر کوئی  اُلٹا یہ پوچھتا کہ مُجھے کسی چیز کی ضرورت تو نہیں ۔ ویسے تو وہاں ہر آنے جانے والے کی آوٴ بھگت ہوتی، لیکن مجھے ایسا لگتا کہ سب سے زیادہ میری ہی پذیرائی ہوتی تھی۔

وہاں  ہمیشہ کچھ نہ کچھ کھیلنے کا شُغل رہتا۔ اُس زمانے میں نہ تو اِنٹرنیٹ تھا، نہ  فیس بُک اور نہ ہی سمارٹ فون۔  لیکن ایک لمحہ بھی بوریت کا اِحساس نہیں ہوتا تھا ۔ وہاں میرے اِتنے سارے  کَزَن تھے کہ سبھی  کے ساتھ باتوں میں آرام سے وقت گُزر جاتا۔مکان میں چھوٹے چھوٹے بچّوں کا ایک ہجوم تھا جِن کی غوں غوں اور چیں   پیں  سے طبیعت بہلتی رہتی۔چھَت کے اوپر سے پورے علاقے کا نظارہ ایسا دِلکَش معلوم ہوتا تھا جیسے پول سیزان(Paul Cézanne) یا کلود مونے (Claude Monet) کی کوئی پینٹِنگ ہو۔ جنوب میں قبرستان سے نِکلتا ہوا عالیشان ڈیڑھ سو سال پرانا ہرا گُنبَد   اور شمال میں کھیت کھلیان کے بیچ سے گزرتی ہوئی  ریل کی پَٹری نُمایاں تھیں۔ پرندے  تکونی  جُھنڈ میں  ایسے اُڑا کرتے تھے جیسے کوئی  چھوٹا طیّارہ ہو۔

دن ڈھلتے ہی طمانیت میں اِضافہ ہوجاتا۔ رات کی سیاہی میں خاموشی پورے علاقے کو اپنی لپیٹ  میں لے لیتی۔ عِشاء کے بعد اندھیرے کا یہ عالم تھا کہ کسی کا چہرہ نہ دِکھتا تھا۔ سبھی کے ہاتھوں میں موٹے موٹے ٹارچ رہتے ۔ جھینگر  کی گونجتی ہوئی گُنگُناہٹ اِس اندھیرے میں کِلاسِیکَل موسیقی کا کام کرتی۔

میرے ننھیالی مکان سے بَمُشکِل دو یا تین مِنٹ کی دوری پر ایک مسجد تھی۔  وسیع رَقبے  میں بنی اِس مسجد میں اِنتہائی  کَشِش تھی۔ اذان میں ایسی مِٹھاس تھی کہ پاوٴں خود بخود مسجد کی طرف دوڑ پڑتے تھے۔ سبھی  کی رفتار مسجد کی طرف لَپَکنے میں  ایک ہی طرح کی تھی۔

کبھی کبھی میرے ذِمّے یہ ڈیوٹی ہوتی کہ میں اپنے نانا کے ساتھ ظہر اور عِشا ء میں اُن کے ہمراہ جاتا اور ان کے ساتھ واپس آجاتا۔ دراصل اُنھیں  گھر  کے  پتھریلے زینوں پر سے اُترنے کے لیے  اور مسجد کی چوکھٹ پر اپنا پہلا قدم رکھنے کے لیے سہارے کی ضرورت ہوتی۔ اُنکے ایک ہاتھ میں چھڑی ہوتی اور دوسرے ہاتھ کی ہتھیلی میری ہتھیلی پر رَکھ کر وہ اُترتے یا چڑھتے۔ اُنھیں اِس بات کی فکر  اکثر ہوتی کہ میری ہتھیلی اُن کے اِتنے وزنی جِسم کو کیسے سَنبھال  سَکتی ہے۔ میرے اندر نہ جانے کہاں سے اتنی طاقت آجاتی کہ اُن کا وزن خود بخود سنبھل  جاتا۔ عِشا ء کی نماز مجھےسب سے زیادہ پسند تھی۔ اُس کی وجہ یہ تھی کہ عشا ءکی نماز کے بعد جب میں اور میرے کزن سُنّت اور وتر سے فارغ ہو جاتے، تو پھر میں اپنے نانا  کا انتِظار کرتا اور وہ اپنے والد گرامی کا کہ اُن کی عبادت ختم ہو جائے۔ ہماری   رِکعتیں تو منٹوں  میں ختم ہو جاتیں، لیکن اِن کی رِکعتیں بہت لمبی ہوا کرتی تھیں۔ بحر حال ہم نے غور کیا کہ ہمارے پاس پینتالیس مِنٹ اِنتظار کرنے کا وقت ہوتا تھا ۔ پھر کیا تھا، ہم مسجد کی باہری صحن میں چکّر لگاتے اور کسی موضوع پر گفتگو چھیڑ دیتے۔ کبھی کبھی چاند کی دُھندلی روشنی میں چمکتے چکنے سفید چبوترے پر ہم بیٹھ جاتے اور اگلے  روز کا کوئی پروگرام بناتے۔

میرا یہ کزن مجھ سے تین یا چار مہینے بڑا ہوگا۔ گُندمی رنگ، مُنہ پر ہلکی ہلکی اُبھرتی رُوئیں، کھڑی ناک، آنکھوں پر پتلا بھورے رنگ کا چشمہ اور گلے میں  ایک چھوٹا سا مُستطیلی سیّاہ تعویذ  لٹکتا رہتا۔ اگر ہم شہر والے کزنوں کو بغیر ٹوپی کے دیکھتا، تو فوراً ٹوکتا کہ یہاں ٹوپی پہننا لازمی ہے۔

ایک دن میں اپنے نانا کو جمعہ کی نماز میں لے کر آیا۔ نماز کے بعد میں مسجد کے سماع خانہ میں  اُن کا اِنتظار کر رہاتھا۔ چونکہ جمعہ کا  دن تھا، اس  لیےاندیشہ تھا کہ تیس پینتس مِنٹ اِنتظار کرنا ہوگا۔ میرا کزن بھی وہیں تھا، وہ بھی اپنے والد کے انتظار میں تھا۔ مُجھے دیکھتے ہی وہ میری طرف مُسکراتے ہوئے لپکا۔ آتے ہی مجھ سے کہا کہ “چلو ایک چکّر قبرستان کا لگا لیتے ہیں۔ اِن کی نماز ختم ہونے سے پہلے ہی ہم واپس آجائیں گے” ۔ قبرستان ہم بَچّوں کے لئے ایک پسندیدہ اسپاٹ تھا۔ ہر قدم پر ہرے بھرے گھنے پیڑوں کے علاوہ ایک بہت بڑا تالا ببھی تھا۔ مدرسے کے

لڑکے تالاب میں تیراکی کے نئے نئے کرتب دِکھاتے۔ قبرستان اتنا بڑا تھا کہ کئی بار جانے کےبعد بھی میں اُس کے   بیشتر حِصّے سے ناواقِف تھا۔

خیر، میرے کزن کا آئیڈیا بُرا نہیں تھا۔ قبرستان صرف دو منٹ کے فاصلے پر تھا۔ اوپر سے اِس چِلچِلاتی دھوپ میں قبرستان کے تالاب اور گھنے پیڑوں کے بیچ چہل قدمی کا ایک الگ ہی لُطف تھا۔ قبرستان میں داخِل ہونے کےبعد، ہم کچھ مُقدّس قبروں کو سلام پیش کرتے ہوئے آگے بڑھے، تب میرے کزن نے ایک نئی پیشکش کر دی۔ “بتاوٴ تم نے کبھی اِملی چَکھی ہے ” ؟

اِملی کا نام سُنتے ہی مُنہ اپنے آپ کھٹّا ہو گیا۔ میں نے پوچھا، “اِس بیچ قبرستان میں اِملی کھانے کہاں جائیں گے” ؟

میرے کزن نے ہنستے ہوئے کہا،”کہیں جائیں گے نہیں، بَس تھوڑی ہی دور پر ایک املی کا پیڑ ہے، وہیں سے توڑ کر کھائیں گے” ۔

میرا جی اِملی کھانے کو تَڑَپ اُٹھا۔

کُچھ ہی قدموں پر اِملی کا سیاہ لَمبا قُطُب نُما دَرَخت مِلا۔ اُس کے موٹے تنے پر بے شُمار جُھریوں  سے گُماں ہوتا تھا کہ پیڑ بہت پرانا ہے ۔ میں نے نظر اوپر کی تو دیکھا کہ اِملی کے گچھے  لَٹْک رہے ہیں ۔ پیڑ کے نیچے ہرے، زرد اور پژمردہ پتّوں کا جماوٴ تھا۔

کھٹّی شے کا تو میں شوقین نہیں تھا، لیکن مُنہ میں جب کسی چَٹخارے کی لالَچ  پیدا  ہو جائے، تو پھر کیا کہنے۔ ہم دونوں نے وہیں سے کچھ کنکر اُٹھائے اور شاخوں پر نِشانہ مارنا شروع کر دیا۔ میرے کزن کا نشانہ مجھ سے بہتر تھا۔ ایک املی سے بھری ہوئ شاخ چٹخ کر ہمارے سامنے آ گِری۔ میرے کزن نے پہلے تو مجھے املی کے فوائد پر ایک چھوٹا سا لیکچر دیا  پھر اُس نے مجھے املی کھانے کا طریقہ بتایا ۔

جب املی کھاکر طبیعت سیر ہو چکی، تب مجھے میرے نانا کی یاد آئی ۔ میں نے کزن کو کہا کہ اب کافی دیر ہو چُکی ہے، واپس چلنا چاہیے ۔ ہم دونوں مسجد کی طرف تیز قدموں سے لپکے۔ مسجد میں ہر طرف سنّاٹا تھا۔ یقیناً نانا  جا چُکے تھے ۔ مجھے اپنے اوپر کافی غُصّہ آیا۔ املی کے چکّر میں بہت بڑی کوتاہی ہو گئی، کہیں کوئی  آفت نہ  آجائے میرے اوپر۔  میرا رُواں رُواں کانپ رہا تھا۔

جب گھر پہنچا تو پھاٹک کی آڑ میں سے دیکھا کہ میرے نانا صحن کی چوکی پر بیٹھے تھے اور  اُن کے سامنے سبھی لوگ خاموش تھے۔ جب میں اندر داخل ہوا، تب نانا نے والدہ سے کہا کہ “یہ پتہ نہیں کہاں چلے گئے تھے ؟ نماز ختم ہونے کے بعد جب میں مسجد کی چوکھٹ پر آیا تو یہ نظر نہیں آئے۔ پھر ایک

مدرسے کے لڑکے کو اِشارہ کیا جس کے ساتھ میں گھر تک پہنچا” ۔

اَب میں کیا بتاتا کہ میں کیا طُرفہ گُل کِھلا کر آ رہا ہوں۔

اُس دِن کے بعد سے میں آج تک املی کے پیڑ کے پاس دوبارہ نہیں گیا۔ بلکہ املی  کھانا  ہی تَرک کر دیا ۔

Bazaar ka gasht (La promenade au marché)

 

بازار کا گشت

شاہ زماں حق

خورشید کا من صبح سے شادمان تھا ۔ دراصل ٱس کے ایک چہیتے دوست اَمِت نے ٱس کے ساتھ کہیں جاکر کچھ خریداری کرنے کی گزارش کی تھی ۔ اَمِت نے فون پر کہا تھا کہ ٱسے بَرَا خریدنا ھے اور اِس کے لئے ٱسےخورشید کےمدد کی ضرورت ہوگی ۔ بَرَا کا نام سُنتے ہی خورشید کے ذہن میں طرح طرح کےغیر فطری فحش خیالات آنے لگے ۔ ٱس نے فوراً حامی بھر دی اور اَمِت کو بھروسا دِلایا کے اِس کام کے لیے ٱس سے بہتر عِلم ٱس کے دوستوں میں کسی کو نہیں ہو سکتی ۔

خورشید اور اَمِت دسویں جماعت کے طُلبا تھے ۔ بچپن سے وه دونوں ایک ہی کلاس میں پڑھتے آرہے تھے ۔ لیکن گزشتہ کچھ سالوں سے جب دونوں کی عمر ۱۳ـ۱٤ سال کے درمیان کی ہوگی، دوستی میں کافی اِضافہ ہو گیا تھا ۔ ایسی کوئ بات نہ تھی جو امِت اپنے دوست خورشید سے بیان نہ کرتا ہو ۔ اَمِت کی پیدأش ہندوستان کے پٹنہ شھر میں عیسائ گھرانے میں ہوئ تھی ۔ ٱس کے گھر میں کافی آزادانہ خیال کا ماحول نظر آتا تھا ۔ اِس کے مماثلَت خورشید ایک تقلید پسند مسلم گھرانے میں پرورش پائ جھاں بچپن سے ہی ٱسے دینیات کی تعلیم حاصل ھوئ ۔ نتیجًہ     

خورشید بھت ہی شرمیلا، کم سخن اور باطنی طبیعت کا تھا مگر اِس کے برعکس اَمِت من چلا، منھہ پھٹ اور غیر باطنی کرادار کا مالک تھا ۔ دونوں کی شخصیت اَگرچہ بلکل مختلف تھی تو یہی دونوں کی گہری دوستی کا سبب بھی تھا ۔ ایک کے پاس دُنیے بھر کی داستاں تھی سُنانے کے لیے، تو دوسرے کے پاس پورے جہاں کا صبر تھا ٱن کو سُننے کے لیے ۔ جوانی کی دهلیز پر پھلا قدم رکھتے ہی جب یہ دونوں سولہ سال کے ہوۓ تب اَمِت کی گُفتگو میں جنسی داستانیں زیادہ جھلکنے لگیں ۔  خورشید اِن کہانیوں کو بڑی دِلچسپی سے سُنتا اور مَن ہی مَن اَمِت کی دِلیری سے متاثروگرویدہ ہوتا ۔ چنانچہ جَب اَمِت نے خورشید کو یہ بتایہ کہ ٱسے ایک بَرا خریدنا ہے تو ٱسے یہ سمَجھ میں نہ آیا کہ یہ بَرا کِس کے لیے ہو سکتا ہے ۔ کیا یہ ٱس کی والره کے لیے ہے ؟ یا کیا ٱس کی اَبْکا بہنوں میں سے کسی ایک کے لیے ہے ؟

صُبح آفتاب عروج ہونے کے بعد خورشید اپنے دوست کے آمد کا کافی بے صبری سے اِنتِظار کر رَہا تھا ۔ آج کا دِن ایک غیر معمولی دِن تھا ۔ جَب اَمِت نے ٱس کے گھر کی گھنٹی بجائ تو وہ خوشی سے اپنے دوست کا اِستقبال کرنے کے لیے لپکا ۔ آج کے روز اَمِت اپنے ٹوٹے ہوۓ پھٹیچر سائکل کے باوجود کافی اَہم شخص معلوم پڑ رہا تھا ۔ اوپر اپنے کمرے میں اَمِت کو بِٹھایا اور ایک نوکر کو بُلاکر چاۓ اور نمکین لانے کا حُکُم دِیا ۔

دونوں دوستوں کے بیچ حسبِ معمول اِدھر ٱدھر کی بات چھڑی ـ خورشید کے اندر ایک غیر معمولی جوش تھا اور اَمِت کی باتوں اور چہرے سے واضح ہو رہا تھا کہ وہ کافی خوش ہے مگر اندر سے تھوڑا تھوڑا شرمِندہ ہے ۔ چاۓ کی چُسکیاں اور نمکین کی کُرکُراہٹ ختم ہوتے ہی اَمِت نے بازار چلنے پر اِسرار کیا ۔ خورشید کو تو جیسے اِسی پَل کا بےصبری سے اِنتِظار تھا ۔ اَمِت نے خورشید سے پوچھا کہ جانا کہاں ہے ؟ خورشید نے ایک رات پہلے ہی اِس بارے میں سوچ لیا تھا ۔ ٱس کے مطابِق پٹنہ مارکِٹ جانا بےوکوفی ہوگی اور کم خطرے سے خالی نہ ہوگا ۔ وہاں ٱس کے جان پہچان والوں کا آنا جانا لگا رہتا ہے اور کوئ اِس طرح کی خریداری کرتے ہوۓ ٹکرا گیا تو ٱسے کافی شرمِندگی ہوگی ۔ خورشید کے دِل میں یہ خیال آیا تھا کہ لالجی مارکِٹ کافی بہتر رہیگا ۔ وہاں تو ٱسے آج تک ٱسکا کوئ رِشتِدار نہیں مِلا ہے، اور خاص کر ایسے وقت میں جب صُبح کے تقریباً گیارہ بَج رہے ہوں، کون فرد بازار میں گَشت لگایُگا ۔

”ہم لوگ لووَر ڑوڈ سے جایُنگے“، خورشید نے اَمِت کو چہکتے ہوےُ کہا ۔

”ٹھیک ہے، تُم ہی لے چلو“ ۔ اَمِت نے بھی ٱسی سُر میں خورشید کو جواب دیا ۔

لووَر ڑوڈ سے ہوتے ہوےُ جب دونوں دوست لالجی مارکِٹ پہنچے، تب اَمِت تھوڑا چونکا ۔ ٱس نے پوچھا، ”کیا تُم کو پکّا معلوم ہے ؟“ ۔

”تُم بےفِکِر رہو“ ۔ خورشید نے بڑے ہی حوصلہ سے جواب دِیا ۔

دونوں دوست باہر کی دُکانوں سے گُزرتے ہوےُ اندر ایک دُکان کے سامنے رُک گےُ ۔ خورشید کا جیسے مقصد پورا ہو گیا ۔ وہ اَمِت کو ایک بَرا و پینٹی کی دُکان کے اندربہت فخر سے لے آیا ۔ چونکہ دُکان غالباً ٱسی وقت کُھلی تھی اور یہ دونوں پہلے گاہک تھے، دُکان کا مالِک اور ٱسکے سارے مُلازِم اِن دونوں کی جانِب دیکھنے لگے ۔ اَمِت حیران و آباک تھا ۔

دُکاندار نے رَسماً پوچھا، ”جی کیا دِکھایُں ؟“ ۔

خورشید نے اپنی بھنویں کو ٱچکاتے ہوےُ اور لَب پر شریر مُسکُراہٹ لاتے ہوےُ اَمِت کی جانِب دیکھا ۔ اَمِت کی آنکھین ایسی پھٹی تھیں جیسے ٱسے یہ ماجرا سَمَجھ میں آہی نہ رہا ہو ۔

خورشید نے ہمّت جُٹا کر اَمِت سے کہا ۔” سائز بتا دو“ ـ

اَمِت نے کافی حیران ہوکر پوچھا۔ ” سائز؟ کیسا  سائز؟ “

خورشید نے آہِستہ سے کہا ۔” بَرا کا سائز“ ـ

یہ سُنتے ہی اَمِت چند ساعتوں کے لیے چونکا ـ پھر ٱس کی آنکھیں چَمَک ٱٹھیں ـ وہ دُکان سے باہر نِکلا اور زور زور سے ٹھہاکے مارنے لگا ـ یہ منظر دیکھ کر خورشید کو بھی کم حیرانی نہ ہوئ ـ

” تُم بَرا لینے آےُ تھے نا ؟ “ ۔ خورشید نے پوچھا ـ

”ہم بَرا نہیں بَڑا لینے آےُ تھے “ ۔ اپنی ہنسی پَر قابو پاتے ہوےُ اَمِت نے جواب دیا ـ

” بَڑا ؟ “ ۔ خورشید نے چونکتے ہوےُ پوچھا ـ

”ہاں بَڑا کا گوشت، میرے مُحلّہ میں تو نہیں مِلتا، سوچا تُم ہی کو لے کر چلونگا ـ مگر یہ تُم مُجھے کہاں لے آےُ ؟“

یہ سُنتے ہی خورشید شَرم سے پانی پانی ہو گیا ـ

 

 

 

CC-BY-NC-ND-4.0: Attribution-NonCommercial-NoDerivs 4.0 International

Lift ki sair (Le tour d’ascenseur)

لِفٹ کی سیر

۔ شاہ زماں حق

یہ تقریباً اُس زمانے کی بات  ہوگی جب میری عمر دس بارہ سال کے قریب تھی ۔ گھر سے پانچ مِنٹ کے راستہ پر ایک بہت بڑا میدان تھا جہاں میں اکثر شام کے وقت محلّہ کے لڑکوں کے ساتھ کریکٹ کھیلنے جاتا تھا ۔

ایک روز  جب ہم لوگ کھیل ختم ہونے کے بعد  واپس آرہے تھے تبھی راستے میں ایک لڑکے نے خوشی سے چلّا کر ہم لوگوں کی طرف مخاطب ہوکر کہا، ”ارے یہاں دیکھو، ایک کمرہ اوپر جا رہا ہے“ ۔ یہ سنتے ہی مجھے بڑی حیرت ہوئ ۔ ہم سبھی لوگ اُس جانب بڑھے ۔ دراصل یہ ایک سنیما ہال کی عمارت تھی جس کے ایک حصّہ میں کچھ منزلوں میں مختلف دفتر مقیم تھے ۔ اِس حِصّے کا آستانہ علیحدہ تھا ۔فرط اشتیاق اندر گھستے ہی جو میں نے دیکھا اُسسے ہماری آنکھ پھٹی کی پھٹی اور منہ کھلے کے کھلے رہ گئے۔

یہ ایک کمرہ تو نہیں بلکہ وہاں ایک چھوٹا جوف دار خانہ نظر آیا جس میں لوگ داخل ہوتے اور اِس خانہ کی دوہری لوہے کا جنگلہ نما دروازہ بند ہوتے ہی خانہ اوپر کی طرف چلا جاتا ۔ میں بڑا حیران ہوا اور میں نے سوچا کہ  یہ  کیسے ممکن ہے۔ بعد میں میں نے جب سینئیر لڑکوں سے اِس حیرت انگیز خانہ کا ذکر کیا تو انہوں نے کہا کہ وہ لِفٹ ہے ۔

پھر میری خواہش ہوئ کہ اِس لِفٹ کا سفر کیا جائے ۔ میرا اسکول،  گھر  اور اِس عمارت  میں زیادہ فاصلہ نہیں تھا ۔ میں نے اپنے دو دوستوں کو تیّار کیا کہ وہ میرے ساتھ آئیں اور اِس جادو والے خانے میں تفریح کریں ۔

پنچ شنبہ کے روز اسکول سے واپسی کے دوران میں نے دونوں دوستوں کو اُکسایا کہ لِفٹ کا لُطف لیا جائے۔ اتفاق سے اُس وقت وہاں پر کوئ نہیں تھا۔

ہم تینوں لِفٹ کے اندر داخِل ہوئے ۔ لوہے کے پَٹ کو کھینچ کر بند کیا اور کسی ایک بَٹَن کو پُرجوش انداز میں دبا دیا۔ لفٹ اوپر کی طرف پروان کی لیکن کچھ ہی لمحوں میں ہولے سے بیچ راہ میں اٹک گئ۔ ہم تینوں کو کچھ سمجھ میں نہیں آیا اور ہم لوگوں نے سارے بٹنوں کو بےتحاشہ دبانا شروع کر دیا۔ میں اور میرے ایک دوست کا ڈر کے مارے اتنابرا حال تھا کہ ہم گرمِ فغان میں مبتلا ہو گئے ۔  ہمارے دوسرے  دوست نے کچھ ہمّت دکھائ ۔

اُس نے زور زور سے ”بھیّا بھیّا“ چیغنا شروع کر دیا۔ وہ کہنے لگا، ”کوئ ہے ؟ ہماری مدد کرو“ ۔

اُسے دیکھکر میرے پہلے والے دوست نے رونا بند کیا۔ اپنی آنکھوں کو موندتے ہوۓ دونوں ہاتھوں کو جوڑا اور سنسکرت میں پوجا کرنا شروع کر دیا۔ میرے دل میں خیال آیا کہ کیوں نہ میں بھی ایک دو درود شریف کا مقالہ کر لوں۔ ہم دونوں بڑی شدّت سے اپنے اپنے آقاؤں کو یاد کرنے لگے  ۔

اچانک کچھ دیر میں لفٹ حرکت میں آگئ۔ ہماری خوشی کی انتہا نہ رہی مانو کہ ہمیں سکونِ قلب محیّا ہو گئ ۔

مگر لفٹ کی رفتار خلافِ معمول  بہت تیز تھی ۔ یہ کافی زور سے پہلے تو اوپر کی طرف گئ اور پھر دگنی رفتار سے نیچے کی طرف گئ ۔ مجھے ایسا لگا جیسے میں کسی جھولے پر سوار ہوں ۔ ہم تینوں لفٹ کے اس انوکھے سفر کا ہنس ہنس کر مزا لینے لگے۔ پھر  لفٹ اپنی پوری رفتار سے سبسے آخری منزل میں آکر موقوف ہو گئ ۔

لفٹ کے باہر ایک آدمی خوب موٹا ڈنڈا لے کر کھڑا تھا، اُسکے ساتھ دو تین آدمی اور کھڑے تھے ۔ یہ سبھی ہمیں غصّہ سے گھور  رہے تھے۔ جیسے ہی ہم لفٹ سے باہر نکلے، اُس ڈنڈے والے شخص نے ہم تینوں کو بہت  ڈانٹ پلائ۔ پھر اُسنے ہم تینوں کے کانوں کو بڑے زور سے امیٹھا۔ ہم لوگوں نے کراہتے ہوئے وعدہ کیا کہ آئندہ سے اِس لفٹ میں ہرگز قدم نہ رکھیں گے۔

لفٹ کی فرحت بخش مختصر سیر کی قیمت کافی مہنگی پڑی۔ کانوں کی لالی اسکی چشمدید گواہ تھے۔

Lift ki Sair by Shahzaman HAQUE is licensed under aCreative Commons Attribution-NonCommercial-NoDerivatives 4.0 International License